Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » نظم ۔۔۔۔ سیپیوں کو نہیں چْنناہاں ۔۔۔۔ رمشا فرحان

نظم ۔۔۔۔ سیپیوں کو نہیں چْنناہاں ۔۔۔۔ رمشا فرحان

میں نے نہیں چاہا

کے یہ ہاتھ

مٹی کو چھونے سے ڈریں

باہر جانے سے رکیں

ہاتھ ملا نے سے رکیں

گلے لگانے سے ڈریں

میں نے نہیں چاہا

کہ یہ ڈر کے جئیں

یہ جان کے جئیں

کہ باہر جانے سے ڈرنا ہے

کہ باہر تو جان لیوا وائرس ہے

یہ کہنا نہیں چاہا تھا

کہ سیپیوں سے موتی نہ ڈھونڈنا

مٹی کے گھر نہ بنانا

کھلی فضا میں سانس نہ لینا

اور

خواب نہ دیکھنا

مگر اب سکھاؤں گی

کہ کوئی ہنس کے دیکھے تو

مسکرانا نہیں ہے

کہیں انساں نظر آجائے

تو پاس جانا نہیں ہے

اب مٹی کے گھر نہیں بنانے

نا جانے کس نے چھوا ہو

اب سیپیوں کو نہیں چننا

نا جانے ساحل پے کون رہا ہو

اب گھر پہ رہنا ہے

نہ جانے کب تک

اب سکول نہیں جانا

نہ جانے کب تک

اب یہ سکھانا ہے

کہ ڈرنا کیسے ہے

کیسے ڈر ڈر کے جینا ہے

Check Also

کورا کاغذ! ۔۔۔  امداد حسینی

(“آصف فرخی“ کے لیے)   وہ جو کورا کاغذ میز پر پڑا ہوا ہے اس ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *