Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » کتاب پچار » پہلی ”آن لائن“ سنڈے پارٹی ۔۔۔ نجیب سائر

پہلی ”آن لائن“ سنڈے پارٹی ۔۔۔ نجیب سائر

کوڈ 19 نے جہاں دوسرے شعبہ جات زندگی کو متاثر کیا وہیں سنگت اکیڈمی آف سائنسز کی سرگرمیاں بھی متاثر ہوئیں۔ سنڈے پارٹی منعقد ہو سکی اور نہ ہی پوہ و زانت کا اہتمام کیا جاسکا۔ کچھ سنگت اس وبا کی زد میں آئے۔ شکر ہے وہ صحت یاب ہوئے۔ کچھ احباب اب بھی اس بیماری سے لڑ رہے ہیں۔ چند خوبصورت لوگوں کو ہم نے کھو دیا۔ اس دوران احباب کا رابطہ فون پہ ہوتا رہا۔ آن لائن کا سلسلہ چل پڑا تو تجویز سامنے آئی کہ پوہ و زانت اور سنڈے پارٹی کی نشست بھی آن لائن رکھی جائے۔ رمضان کا مہینہ آن پہنچا۔ عید کے بعد کا سوچا گیا۔

بالآخر اتوار 21 جون 2020 کو سنڈے پارٹی کا آن لائن اجلاس رات 8 بجے شروع ہوا۔ جس میں ڈاکٹر عطاء   اللہ بزنجو، ڈاکٹر شاہ محمد مری، ڈاکٹر منیر رئیسانی، سائرہ نور، عابد میر، محمد نواز کھوسو، ڈاکٹر مبین میروانی اور نجیب سائر نے شرکت کی۔ باقی احباب مصروفیت اور اس ٹیکنالوجی کے استعمال میں دشواری کے سبب شریک نہیں ہوسکے۔

سب سے پہلے منصور بخاری صاحب کے ایصال ثواب کے لیے دعا کی گئی۔ ہمارے سنگت عطاء اللہ شاہ اور رفیق کھوسو صاحب اس وبا سے لڑ رہے ہیں اور جو بیمار ہیں ان کے لیے دعا کی گئی کہ اللہ پاک انہیں جلد صحت یاب کرے۔ اور جو اس وبا کو شکست دے چکے انہیں نئی زندگی ملنے پر مبارکباد دی گئی۔ سنگت کی ہیلتھ فیکلٹی ہر وقت حاضر ہے۔ کوئی بھی مسئلہ درپیش ہو آپ ہمارے ڈاکٹرز سے رابطہ کرسکتے ہیں۔

بجلی نہ ہونے باوجود ڈاکٹر مبین میروانی محمد نواز کھوسو آن لائن آئے۔ موبائل لائٹ کی وجہ سے اجالا ان کے چہروں پہ تھا اور باقی ہر طرف اندھیرا۔ نیٹ ورک کی کمزوری کے سبب نواز کھوسو نے جلد رخصت لی۔ مہینوں سے ایک دوسرے کو نہیں دیکھ چکے تو آن لائن آتے ہی کسی کے گنج بڑھنے پہ قہقہے لگے، کسی نے رنگ لگنے کو نوٹس میں لایا، کسی کی داڑھی سفید تھی تو کوئی جوان ہوا تھا۔ کافی دیر تک ہنستے رہے۔ پھر مختلف موضوعات پہ بات چیت ہوئی۔

ڈاکٹر شاہ محمد مری کا کہنا تھا کہ سرمایہ دارانہ نظام کو تاریخ میں اتنا بڑا جھٹکا نہیں لگا جتنا اس وبا کی وجہ اسے نقصان اٹھانا پڑا۔ انہوں نے کہا حالت بہت گھمبیر ہے۔ بے بسی ہے۔ بت گرائے جارہے ہیں۔ اذیت ناک تعزیتوں سے فرصت نہیں۔ ایک کے جنازے میں جاو تو اگلے کے مرنے کی خبر آتی ہے، اس کے فاتحہ میں پہنچو تو کوئی اور خبر۔ پتہ نہیں ہم میں سے کون اگلی میٹنگ میں ہو یا نہ ہو۔ ہماری کشور ناہید بھی بیمار ہیں۔ میں نے انہیں کہا کہ جلدی ٹھیک ہوکے دکھاو۔ انہوں نے جواب دیا بس دو دن میں۔ مزید کہا کہ پہلے واٹس ایپ گروپ میں ڈاکٹر بزنجو کے گانے آتے تھے۔ آج کل شئیر نہیں کرتا۔ اس پہ قہقہے لگے۔

ڈاکٹر منیر رئیسانی کا کہنا تھا کہ اس وبا سے بچنے کا ایک ہی طریقہ ہے اور وہ ہے احتیاطی تدابیر۔ اس کے علاوہ کچھ نہیں۔ ماسک، گلوز، ہاتھ دھونے اور ہینڈ سینیٹائزر کا استعمال کیا جائے۔ بہت کم لوگ اس پر عمل کر رہے ہیں اور بد قسمتی سے ہر چیز کو سازش کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے۔ ٹوٹکے بازی ہوتی ہے۔ آپ نے اپنی تازہ اور نسبتا طویل نظم سنائی جس کا عنوان تھا Chain Reaction۔ جسے پسند کیا گیا۔

سنگت کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل ڈاکٹر عطاء اللہ بزنجو کا کہنا تھا کہ احتیاطی تدابیر اختیار نہ کرنے کے سبب حالات دن بدن خراب ہوتے جارہے ہیں۔ اوستہ محمد اور جعفر آباد کی مثال آپ کے سامنے ہے۔ لوگوں کو قائل کیا جائے کہ احتیاط کریں اور ماسک وغیرہ کا استعمال کریں۔

عابد میر نے بات آگے بڑھاتے ہوئے کہا کہ شہر سے باہر لوگ ہاتھ ملاتے ہیں، گلے ملتے ہیں۔ اوستہ میں یہی ہوا۔ اس لیے وہاں بہت زیادہ کیسز سامنے آئے اور ماموں الحمدللہ صحت یاب ہوگئے۔

وبا کے دنوں میں کیا پڑھا جارہا ہے اس پر ڈاکٹر منیر رئیسانی نے کہا وہ میر کو پڑھ رہے اور ارون دھتی رائے کی کتاب کو دہرا رہے ہیں۔ ڈاکٹر بزنجو نے کہا کہ پڑھنے کے ساتھ کچھ لکھ بھی رہے ہیں۔

آن لائن سیشن کے حوالے سے کہا گیا کہ یہ تجربہ شاندار رہا۔ بہتر ہے ایک وقت متعین ہو تاکہ زیادہ سے زیادہ دوست محفل میں شرکت کرسکیں۔ احباب سے درخواست بھی کی گئی کہ وہ نشست کا لنک واٹس ایپ اور میسنجر پہ زیادہ شئیر کریں تاکہ دوسرے صوبوں اور بیرون ملک موجود دوست بھی شرکت کر سکیں۔ جو دوست کسی نہ کسی وجہ سے شرکت نہیں کر پائے ان کے ہم اگلی بیٹھک میں منتظر ہوں گے۔

Check Also

سنگت پوہ زانت  ”آن لائن“۔۔۔ عابد میر

وبائی صورت حال کے پیشِ نظر فزیکل اجتماعات چوں کہ فی الوقت ممکن نہیں رہے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *