Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » گوہر گھر ۔۔۔ تمثیل حفصہ

گوہر گھر ۔۔۔ تمثیل حفصہ

تاروں نے کیسا رات کا جنگل جِلا دیا

منظر بدل بدل کے مِرا دن بنا دیا

 

میں جس کی آنکھ سے یہ جہاں دیکھتی رہی

جنت کے پاس اْس نے مِرا گھر سجا دیا

 

احساس ہے بہت تْو مِرے پاس ہے بہت

اس سلسلے نے مْجھ کو مجھی سے مِلا دیا

 

پتھر کو پوجتی رہی، مٹی کو، آگ کو

عورت نے مرد کو بھی کوئی بت بنا دیا

 

میں اس لیے بھی نیند کو ترسی ہوں عمر بھر

تْو سو سکے سکون سے، تجھ کو سْلا دیا

 

اک خواب نور نور میں لپٹا ہوا تھا وہ

حیرت نے میری آنکھ کا پردہ ہلا دیا

 

تمثیل اشک اشک دعا مانگتی رہی

آجا کہ انتظار میں دل بھی گنوا دیا

Check Also

غزل ۔۔۔ صفدرصدیق رضی

بچھڑ گیا وہ تو اس یارِ خوش جمال کے بعد کسی سے جی نہ لگا ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *