Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » کاشف شاہ

کاشف شاہ

جنگِ نبود و بود ہے، سانس کا زیر و بم نہیں

مجھ کو سنبھالتا ہے یہ، میرا بدن بھی کم نہیں

دشتِ الم کے اْس طرف تیری صدا سنائی دے

تجھ کو پہونچوں کس طرح، آہوئے دل میں رم نہیں

جن کے بدن فنا ہوئے اْن کو دوام مل گیا

دستِ اجل میں خاک ہے دستِ اجل میں ہم نہیں

اجرتِ غم وصول ہو، کلفتِ دل حصول ہو

تاکہ جنوں قبول ہو، گریہ خواب تھم نہیں

سب کے لباس پر یہاں پھینکی گئیں سیاہیاں

قریہء  بے امان میں کوئی بھی محترم نہیں

جام و سبو کی خیر ہو، نعرہء ہْو کی خیر ہو

ذوقِ نمو کی خیر ہو، کشتِ بدن میں نم نہیں

اسودی حیرتوں نے یوں، آنکھیں مری نچوڑ لیں

ایک بھی آئینے کا اب، باقی رہا بھرم نہیں

Check Also

غزل ۔۔۔  رخشندہ نوید

اشک پیتے ہوئے حد درجہ حسیں لگتی ہوں مسکرانے کے سبب خندہ جبیں لگتی ہوں ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *