Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » آزاد جمالدینی

آزاد جمالدینی

من باور چون کنین؟

ہما دفزومُج اِنت آسمان گُبار اِنت

پریشان رنگ و زنچک تار پہ تار اِنت

منی روچ ہم شپ اَنت سیاہ اَنت تہاراِنت

شپ ئے جُستا مکن چے حالِ زار اِنت؟

 

اے حال انت چون کشیں آزاتُن آزات؟

 

وزیر و افسر و زردار نت ہم شور

لُٹنت غریبانا کننت دَور

کننت سوداگری، قاچاق ہمے گور

رعیت ہاک بوارت یا تحلگیں جور

من باور چون کنین آزاتُن آزات؟

 

ہما قانون پرنگ ئے جرگہ ئے ڈول

ہما سردار و زردار ئے وڑ و ڈول

غریب گندیت امیر اکنتِ دلِ ہول

کجا شُت کل مومن اخوۃ ئے قول؟

من باور چون کنین آزاتُن آزات؟

 

”میں کیسے یقین کروں؟“

 

دھرتی سے آکاش تک آندھیاں اور تارکیاں موجود ہیں

جنتا کے چہرے افسردہ اور گریبان تار تار ہیں

ہمارے دن راتوں سے بھی تاریک تر ہیں

اور ہماری راتوں کا کیا پوچھتے ہو (ان بھیانک دنوں اور تاریک راتوں ہی سے ہماری خستہ حالی کا اندازہ لگا لو)۔

میں کیسے یقین کرلوں کہ ہم آزاد ہیں؟

 

وزرا، افسر اور جاگیردار آپس میں شیر و شکر ہیں

یہ غریبوں کو لوٹ کر دادِ عیش دے رے ہیں

یہ انسانیت کا خون پینے والے سمگلنگ کرتے ہیں اور اسے تجارت کا نام دیتے ہیں

عوام خاک پھانکیں یا زہریلی جھاڑیاں کھائیں انہیں اس کی کوئی پرواہ نہیں

میں کیسے یقین کر لوں کہ ہم آزاد ہیں؟

 

وہی بو سیدہ اور پرانا انگریزی قانون ہے وہی جرگہ ہے

جاگیرداروں اور سرداروں کے وہی پرانے طور طریقے موجود ہیں

جب غریب امیر کو دیکھتا ہے تو اس کا دل کانپ کانپ جاتا ہے

تمہار کُل مومن ”اخوۃ“ کا وہ نعرہ کہاں گیا

میں کیسے یقین کر لوں کہ ہم آزاد ہیں؟

 

Check Also

فرحین کے لیے! ۔۔۔ امداد حسینی

تیرے گھر پر چاندنی سے ایک سندھی نظم لکھ کر گھر کے در پر چھوڑ ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *