Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » قصہ » موتک ۔۔۔ مہتاب جکھرانی

موتک ۔۔۔ مہتاب جکھرانی

گرمیں روش سرا نشتو گراں ناز جنتھرا  درشانا  زہیریاں گشغااث۔ہمے ڈولہ مان کاخت کہ جنتھر دہ گراں ناز ئے زہیریانی پھسوا وثی توار ”گُرررر“ آ مں دیانا روغ اث۔گوئشے جنتھر گراں نازا گوں دڑداں بہر کنغااث۔جنتھر ئے ہمے توار گراں نازا پہ یہ دمبیروے اث، چنگے اث۔ وثی گونڈلیں بچ ’حیرو‘ ئے جدائیا پھذ وثی سیاد و دوزواہ ہمے جنتھرا را دیثہ، پوانکہ  ہر وخت ایش اث و ہمے کوہیں جنتھر۔

ناز ہلکئے مڑدماں پہ گنوخے اث۔وخت وختے کسے صبوح و کسے بیگہانی نغنی چھانغے و آفی کنجی ئے داث، پر آڑت کلاں درشائنغاپہ داثنت۔ وختے کہ ہوشا مں آخت گڈ وثی خیالی ئیں نشارئے گوٹھ (عروسی گُذ) دوخت اثی۔

حیرو ؔ  ۹۱ سال پیشا واپاریاں گوں تھی ڈیہے آ شثغ اث۔روغا پھذ حیرو ئے  ہچ حال نہ بیثہ کہ ڈغارا واڑتھہ یا ٓسمانا گڑُوچِثہ۔گرانازا وثی زائیفائی وسا حیرو باز پولثہ۔ آؤخ و رؤخاں را کُلہ داثغ انت پر کسا ڈس نہ داثہ۔نی دِہ وختے کہ گراناز لیڑواں گندیث  تہ بے سُدھی گوئشیث”حیرو اللہ آ آڑتھہ۔۔۔مئیں مُرواذِر اللہ آ آڑتھہ۔۔۔۔!“ آں لیڑواں گوئر روث، حیرو کہ نہ گندیث گڈ لیڑو و واپاریاں را دعایاں داث۔گریئیث۔۔۔!

حلک ئے راستی پلوا روش ٹکہ پلواژہ روش کانوئے کچھا بڑز بیثغ اث۔ درشکانی ساڑتھیں سا شیرا نیم برہنغیں چُک  لئیوا کھنغ اثنت۔دیرا ژہ مستریں کہیرانی پلوا لیڑو گلے شمال بیثہ۔ بینگاں کہ لیڑو دیثغ انت گڈ بھونکانا لیڑوانی پلوا شثغ انت۔پھیلویں حلک ئے بینگ لیڑواں بھونکغ اثنت۔ہمے آواز کہ چُکانی گوشاں کپتہ گڈ اشاں لئیو کھنغ اشتہ۔یہ مستریں چکے آ گوئشتہ کہ ”بروایت گنوخا را حالا دئیت۔“

گراں ناز وثی جنتھرا گوں وھذان اث۔ دف پُھرا زہیریاں گوئشانا روغ اث۔ ایشی ئے چھیاریں پلواں لوتھ و اپھان ایر اثنت۔ایشی ئے ہڑدوئیں دستاں جنتھر درشغا شہ ٹھیما اثنت۔ اے وثی جنتھر ئے دستغا ٹاہغ اث کہ چُکے سہکانا  آختہ، لیڑوانی حال داثئی۔ گڈ اشتئی جنتھر، تھختہ لیڑوانی پلوا۔۔۔

اے تھشانا لیڑوانی پلوا روغاث، ایشی ئے دڑتھغیں سری بال گِرغ اث۔چُک نی گراں نازا گندغ اثنت، ہمشاں را نوخیں سوادھے دست کپتغ اث۔بینگ دِہ نی گڑتھو مالانی نُغا شثغ اثنت۔گراں ناز شثو جکھثہ لیڑوانی دیما۔ زوارا گوئشتی ”منی حیرو آڑتھے۔۔۔منی  حیرو!!!تھام ایں منی حیرو۔۔۔؟ منی حیرو،منی  مُرواذریں حیرو۔۔!!!!گراں ناز ئے آوازا ہژمب مان اث۔  بگا ریشیں زوارا ولدی داثہ”آئی اللہ کھنت تھئی حیرو کئیث۔۔!“”کھذیں کئیث منی دل ئے بند؟؟؟ گیست سال گوئستہ نیاختہ منی لال۔۔“گڈ گریئغا نشتہ۔ لیڑو وثی دگا گوئستیا شثغ انت۔اے دہ گرے آنا لوغا شثہ۔

گڑتھو آختہ لوغا، جنتھرے دستغ ٹاہثواغد زہیریاں شروع بیثہ۔نی زہیریاں گوں گریئغ آواز دہ اوار اث۔گوئشے کہ زہیریانی ہندا موتکاں گوئشغ اث۔مروشی گوئشے کہ ایشی ئے پھیریں ہڈ جدائی آ داشت کث نہ کھنغ اثنت۔ ہمختر گریثئی کہ ایشی ئے بتا لڑزغ شروع کثہ۔شثو کپتہ لوغ ئے کنڈے آ۔ نیم موتکیں زہیریاں گوئشانا بے سدھ و بے ہوش بیثہ۔بوذ آختہ تہ دیثئی کہ حلک ئے مڑدم مچھ انت، آہان را آف، سِیسرُنگ،شیر، جھنڑ و ڈلغ گون انت۔

گراناز ئے ٹونک شہ گُٹا جوانیا درکفغا نہ اث۔ آستوڑیا پول کثئی کہ ”مناں چہ بیثہ؟“ یکے آ گوئشتہ ”تھرا ہچ نویثہ، گراناز ما تھئی گِندغا  آختغ اوں۔“ ”مناں حیرو ئے زہیراں بھورینتھو اِشتہ۔۔۔۔!!!!“ ہمے گوئشتو گراں نازا گریثو داثہ۔ہمے ڈول مان کاخت کہ گراناز ناامید بیثغ اث۔ گراں نازا را گریئغا دیثو چھیئے مڑدمانی انڑزی دہ ہیر بیثغ انت۔کسا نیں چک کہ آہاں پہ گراناز لئیو و سوادھ ئے زریئعہ یے  اث،اے نظارہا دیثو حیران اثنت۔ہمے ساعتا یہ سویث ریشیں مڑدے تھشانا  آختہ  حال داثئی ”مستاغری ی ی۔۔مستاغری مئیں اِنوووو۔۔۔۔!حیرو آختہ۔۔!“

مستاغری اشکثو گوئشے کہ گران نازئے ہشکیں ہڈاں ساہے کپتہ۔ حیرو دیثو پجہ آڑتھئی۔ گریئانا اے دیم آں دیم کثو چُکثئی۔ حیرو ئے کہ دست چُکغا پہ ذڑتھغ انتئی۔۔حیرو ئے دستاں ٹھیما اثنت۔ ہمے دیثو پھول کثئی”بچھووو!! اے چہ؟“ ”آئی من باندی بیثغاں، ہموذا کوہیں جنتھر دُرشتوں۔“ ماثا کہ ہمے حال اشکثہ دف پُھرا گریثئی۔ گریئانا گریئانا آواز بند بیثئی، آواز کہ بند بیثہ موتک بڑز بیثغ انت۔

حیرو آ بے ساہیں ماث ئے  نیم بندیں چھماں دیثہ، آہی چھمانی لافا بے وھاوی و یکی یے عکس دیثئی، پکھغیں دست و بے گوژدیں ہڈ اے شاہذی آ دیئغ اثنت کہ گراں نازا را یکی و بے سیادیا کشتہ۔

حیروآ چھیاریں پلوا موتک گشوخانی نُغا نغاہ چھرینتو دیثہ، پھریں لوغا یہ سیادے دیثئی، آں کوہیں جنتھر اث۔آں کلاں شہ جداو نویکلائیں موتکاں گوئشغ اث۔کوہیں جنتھرانی موتکاں حیرو و گراں ناز پوہ بنت۔ہماں روشا شہ پھذا کوہیں جنتھر و حیرو ہڑدوئیں موتکاں گوئشغ اثنت۔

Check Also

رائیگانی ۔۔۔ مصباح نوید

                فاطمہ بے جان سی ہاتھ پاؤں چھوڑے پلنگ پر پڑی تھی۔ ”ٹھیک ہو جائے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *