Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔۔   محسن شکیل

غزل ۔۔۔۔   محسن شکیل

جسم  سے  روح  تلک  خود  کو  اجالے  ہوئے  لوگ

ہیں چراغوں کو ابھی خود میں سنبھالے ہوئے لوگ

ایک  خوشبو   کی  طرح  کنج   چمن  میں   مہکے

دل  سے  نفرت  کے  اندھیروں  کو  نکالے ہوئے لوگ

گھپ  اندھیروں  میں  چھپی  رہ  کو  منور   کرتے

آج بھی ساتھ  ہیں کچھ نور میں ڈھالے ہوئے  لوگ

لوح   ایام     پہ   لکھنے   کو    نمو    نامہ   خواب

روشنی   ساتھ    لیے   میرے   حوالے   ہوئے    لوگ

عہد   بہ   عہد    فراواں   ہی    ہوئے    ہیں اب  تک

عمر   کے  سہمے  ہوئے   درد  کے   پالے   ہوئے   لوگ

آن  بیٹھے  ہیں  مری آنکھ میں خاموشی سے

خطہ  خواب  مقدس  سے    نکالے   ہوئے   لوگ

Check Also

یہاں خوش گمانی کا راج تھا  ۔۔۔  ازہر ندیم

یہاں آرزوؤں کی سلطنت تھی بسی ہوئی یہاں خواب کی تھیں عمارتیں یہاں راستوں پر ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *