Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » بچ گیا میں!!! ۔۔۔   سید تحسین گیلانی

بچ گیا میں!!! ۔۔۔   سید تحسین گیلانی

دیکھتا ہوں کہ زمیں کالی دھواں تھی

ہر طرف تھیں لہلہاتی کالی فصلیں

جن کے شاخوں کی جگہ بازو تھے نکلے

اور ہر پتے سے آنکھیں گھورتی تھیں

گہری کالی گھورتی سفاک آنکھیں

کچھ پرندے ایک برگد پر تھے بیٹھے

اور وہ اْس پیڑ پر لٹکے ہوئے بے جسم

چہرہ نوچ کھانے میں مگن تھے

اور ہر لمحہ وہاں اس میلوں پھیلے

کالے برگد پر کئی لاکھوں کروڑوں

کالے چہرے جنم لیتے اور نوچے جا رہے تھے

جن کی کالی میلوں تک پھیلی ہوئی شاخوں

سے لپٹی بے زبانیں۔۔۔!! اْن نْچے چہروں

سے بہتا خون چوسے جا رہی تھیں

ایک جانب تھی سکوتِ ناتواں کی انجمن۔۔ تو

دوسری جانب بَرَہنہ شور کا تھا رقص جاری

کرلے پہناوں میں لپٹا کالا رقص

اْن نْچے ادھڑے ہوئے چہروں کی خاطر تھا وہاں۔۔پر

میں نے سوچا میں کہاں اِس کالی دھرتی آسماں میں پھنس گیا ہوں۔۔۔

میں کہاں ہوں؟؟

دیکھتا ہوں!!

میں وہیں ہوں اور جسم و روح کے بِن ایک چہرہ ہوں وہاں

جو اْن گِدھوں سے نْچ رہا ہے

اور

اَلارَم بج رہا تھا۔۔۔۔!!!!۔

Check Also

The Axiom Of Soil— Nosheen Qambrani

یہ بہشت ِ اجل محوِ خوابِ رواں عمر کی پیاس کا تاس (1) تھامے ہوئے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *