Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل  ۔۔۔ عیسی بلوچ

غزل  ۔۔۔ عیسی بلوچ

ہوں حرفوں میں لیکن تفصیل میں ہوں
میں تو رکھا کسی زنبیل میں ہوں

تو ہے بادِ صر صر کالی شبوں کی
میں ہوں نورِ سحری قندیل میں ہوں

میں اوندھی دنیا میں سیدھے جہاں کی
جانے کب سے جہدِ تشکیل میں ہوں

میں بھی زندہ رہنے کی کوششوں میں
فرمانِ حاجت کی تعمیل میں ہوں

مجھ کو گمنامی کا ڈر یوں بھی نہیں
میں اوروں کے لب سے ترسیل میں ہوں

میں تو بندہ ہوں کوئی اور جہاں کا
اس دنیا کی بابت تذلیل میں ہوں

میرے من کا سورج کیسے بجھے گا
میں جو آدرشوں کی تحویل میں ہوں

میری فطرت ہی آڑے آجاتی ہے
میں تو عیسی زعمِ تکمیل میں ہوں

Check Also

گزری اور آنے والی بہاروں کے نام ۔۔۔ نوشین کمبرانڑیں

ہزاروں گنج ہیں جن پر تیرے پیروں کے بوسے ہیں تہہِ خاکِ وطن تو ہے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *