Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ شاہد رضا

غزل ۔۔۔ شاہد رضا

اُبھرتے خواب کی کرنیں نکھرتا رنگِ خیال
شعورِ زیست میں اُتری ہے آج صبحِ کمال

دھنک کے رنگ بکھیرے گا جب وہ فرضِ محال
ہماری آنکھ میں ٹھہرے گی ایک شامِ وصال

جب اپنی سمت سفر میں پڑاؤ ہے ہی نہیں
تو کیسا رختِ سفر اور کہاں کا اذنِ سوال

ہم اپنی سوچ کی لہروں پہ رقص کرتے ہیں
نہیں ہے وجہِ تماشا تمہارا حسن و جمال

میں جتنا ماضیء ناداں کو کوس لوں پھر بھی
نہیں جو اشکِ ندامت تو کیسا رنج و ملال

ہمارا فعل بتاتا ہے ہم سنور گئے ہیں
بگڑنا کوچہء یاراں میں اب ہے خواب و خیال

میں سو دلیلیں بھی لاؤں تو پھر بھی کیا حاصل
مِری دلیلوں پہ بھاری ہے اُس کی ایک مثال

وہ میرے دوست، مِرے ہم سفر، مِرے ہم راز
کہاں ہیں ٹولیاں اُن کی رضاؔ جی وقتِ زوال

Check Also

پروردگار  ۔۔۔ عبدالرحمن غور

موسمِ خوشگوار کا عالم گویا نقش و نگار کا عالم اِک طرف آہ بے رُخی ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *