Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » وھاب شوھاز

وھاب شوھاز

دسمبر

آنکھ ویران ہے
دل پریشان ہے
چارسو ہے فغاں
آہ ، اور سسکیاں
شہر ماتم کدہ
خوں چکاں ہے فضاء
غمزدہ روشنی
سوگ میں چاندنی
راہنما ، راہبر
نا کوئی چارہ گر

ہے دسمبر وہی
سال دوجا سہی
سب وہی رنگ ہیں
رنگ بے رنگ ہیں
کچھ نیا تو نہیں
نا مکاں ، نا مکیں
سلسلے روز و شب
جانے بدلیں گے کب

یہ دسمبر بھی زخمی دسمبر رہا
قتل گاہوں میں رنگین خنجر رہا
بس کیلنڈر کے اوراق بدلے گئے
نام بدلے گئے، دام بدلے گئے
اب سنا ہے نیا سال آنے کو ہے
زندگی اک نیا موڈ پانے کو ہے

کیسے کرلوں یقین
جی اٹھے گی زمین
کیا یہ ظلم و ستم
غم ، یہ رنج و الم
اب کے تھم جائیں گے
رنگ کھل پائیں گے
قتل گاہوں پہ تالے لگائے کوئی
مسکراہٹ خوشی، چین لائے کوئی

کاش اگلے برس
ہم نہ جائیں ترس
چار سو زندگی
عشق ہو بندگی
گل کھلیں دل ملیں
زخم بھرنے لگیں
آنکھ پرنم نہ ہو
گھر میں ماتم نہ ہو
گیت خوشیوں کے گائیں ہوائیں یہاں
خوشبو برسے گھٹاؤں سے مہکے جہاں
ہرطرف امن کی دھن ہو سنگیت ہو
نفرتوں سے محبت کی اب جیت ہو

ہے یہی آرزو
زندگی چار سو
گیت گاتی رہے
گنگناتی رہے
مسکراتی رہے
جھلملاتی رہے
خوشبووں سے معطر
رہے میرا گھر
کاش اب کے دسمبر ہمیں دے خبر
اک نئی صبح کا یہ رہے نامہ بر
یہ دسمبر ہمیں دے نوید سحر
یہ دسمبر ہمیں دے نوید سحر
دسمبر 2017

ودار

’’ہما، کہ پہ واھگے‘‘
بہ سنگاریت ڈیلا بانگواہئے ،سیہ شپانی،،
بہ سوچیت لنج آ
ہما، کہ نیمروچ ئے آس گواریں طبیعتا را
پہ آپ شودیت،
ہما، کہ نادراھیں بیگہاناں
بہ کنت درمان،

ہما، کہ پہ منزلا سباہ ئے
چراگ بیت او شپاں سپر کنت،
ہما، کہ گوں ماہکان ئے درنزاں
ھبر کنگ زانت،
ہما، کہ استالاں سنگتی کنت,
ہما، کہ نندیت گوں پل ئے وشبواں
ھلوتے کنت
ہما، کہ روچ ئے
خماریں برمشانی زیملازانت،
ہما، کہ گوں رژنا کنت دیوان،
ہما، کہ کنت گوں تہاری آ جنگ،
ہما، کہ شے ئے دلابوانیت،
ہما، کہ ھانی ئے ڈیلا دربارت،
ہما، کہ مھر ئے بہشت سازیت،
ہما، کہ جہداں بزانت بکشیت،
ہما، کہ زند ا را دروشمے دنت،
ہما، بنی آدم ئے ودار ا
یک عہدے گوستگ من راہسراہاں،
کہ جند ئے لوگا
چو نیم راہ ئے مساپراہاں،بلے،
جہان ئے تبا نیاہاں۔

Check Also

فہمیدہ ریاض

کوتوال بیٹھا ہے کیا بیان دیں اس کو جان جیسے تڑپی ہے کچھ عیاں نہ ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *