Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » زاہدہ رئیس راجی

زاہدہ رئیس راجی

آج کا بچہّ

زندگی موت بن گئی یا پھر
موت کا خوف مر گیا ہوگا
گولیوں کی صدا ئیں سُن کر بھی
ماں کے آنچل میں اب نہیں چھپتا
مقبروں سے یا مرتے انساں سے
اب کے بچّے کو ڈر نہیں لگتا
موت سے زندگی جُدا کرتا
حاشیہ بھی تو مٹ گیا ہوگا؟
دیکھ لو کس قدر بہادر ہے
اگلے وقتوں سے آج کا بچہ

شپ 

واھگانی پُرشت پُرش ئے
بے تواریں شاہدئے
زندمان ئے دپتر ازانئے ، ھیال ئے کاسدئے
بلے !
کس تئی ھالانہ پُرسیت،
کس ترا سرپد نہ بیت
کس تئی رنگا نہ داریت،
ہرکسی رازاں دلا
کس تئی پیما نہ لڈّیت
زندمانئے ٹیکیاں
شپ! ترا شاباش انت، سگ ئے۔۔۔
آزمان ئے جیڑگاں

واپسی کا سفر

میں کہ ابہام کے راستے سے پرے
ڈھونڈتی تھی جسے
وہ یقیں، بے یقینی کے مسند پہ بیٹھا ہوا
کوئی ابہام تھا
گریہ سچ ہے تو کیوں
تیرگی میں مجھے روشنی کا گماں ہی پلٹنے نہ دے

ہم نے مانا کہ ہر لوٹنے کا سفر

اپنے اندر تھکی یاد کی گھٹریاں
باندھ کر جب پلٹنے کی رہ پر چلیں
کرب لمحوں میں بے ضبط موتی بھی پلکوں پہ آ کے تھمیں
ہم نہ چاہینگے لیکن تعاقب میں ہونگی وہ پرچھائیاں
خواب زاروں پہ پھیلی وہ تنہائیاں
شب کے گہرے پڑاؤ پِہ روشن چراغوں کی اُمید بھی
ڈگمگانے سے پہلے، پریشاں تھی، پل کو حیراں تھی
وہ جو موجود ہے کیسے کردوں نفی
بے دھیانی میں مڑ کر جو دیکھا تمہیں
ضبط کی ساری کڑیاں سمیٹے ہوئے
گہری آنکھوں کے سیلاب میں بہہ گئے
تم سے میرا یا مجھ سے تمہارا سفر

وہ مائیں کیسے سوئیں گی ؟

 

کہ جن کی عمر تو
بچوں کی سُکھ میں ہو گئی قرباں
انہیں اب عمر بھر
اس درد کی بھٹی میں جلنا ہے
کہ جن کے لوٹ آنے تک
نگاہیں راہ تکتی تھیں
اب اُنکی عمر کا حاصل
نہیں گھر لوٹنے والا

وہ مائیں کیسے سوئیں گی
کہ جن کے بے گنہ بچّے
کسی ظالم کے ظلم و جبر کا
لقمہ بنے ہونگے؟

سیاست کر لو لاشوں پر

سیاست کرلو لاشوں پر
کہ ان میں کوئی بھی لاشہ
نہ بھائی ہے تمہارا
اور نہ بیٹا ہے نہ بیٹی ہے
نہ ان سے درد کا بندھن
نہ کوئی خون کا رشتہ
نہ ان سے منسلک
آزردہ روحوں سے کوئی نسبت
مگر انسانیت کے دعویدارو!
سوچ لو اتنا
یہ بازی اب جو تیری ہے
اِسے اِ ک دن پلٹنا ہے
تِری قسمت بدلنی ہے
تجھے وہ کچھ دِکھانا ہے
کہ جس کو دیکھنے سے قبل
اپنے رب سے سجدے میں
خود اپنے خاتمے کی
گڑگڑا کر بھیک مانگو گے

رشتے

 

وہ رشتے معتبرہیں زندگی کی تُند راہوں میں
جو ہر پل ساتھ دیتے ہیں
بھیڑ میں ہاتھ دیتے ہیں
گِرو تو تھام لیتے ہیں
دُعا میں نام لیتے ہیں
وہ رشتے معتبر ہیں زندگی کی سرد شاموں میں
جو یخ بستہ ہواؤں کے تھپیڑے روک لیتے ہیں
خزاؤں کو، بہاروں کی پہنچ سے روک لیتے ہیں
جو ہرٹھہرے ہوئے پل کو، نیا اک موڑ دیتے ہیں
جو نفرت کی سبھی اُونچی فصیلیں توڑ دیتے ہیں
جو پیغامِ محبت سے دِلوں کو جوڑ دیتے ہیں
جو خوشیاں بانٹنے میں اپنا حصّہ بھول جاتے ہیں
جو کر لینے پہ آتے ہیں تو کر کے بھول جاتے ہیں
جو ساری دُوریوں کو ایک ہی پل میں مٹاتے ہیں
جو اپنا ہی نہیں کہتے ہیں، اپنا بھی بناتے ہیں
وہ رشتے معتبر ہیں زندگی کی دھوپ میں راجیؔ
جو قسمت سے نہیں لڑتے ، مگر لڑنا سکھاتے ہیں
جو ہر پل نااُمیدی کے اندھیروں کو بُجھاتے ہیں
کہ جن کو دیکھ کر احساس کو راحت توملتی ہے
غمِ دِل کو غموں سے بھی ذرافرصت توملتی ہے

بشارت

نے زمینا وتی، باتنا وپتگیں ، واھگانی دلئے
آکبت پْرس اِتگ،
نے کہ آجوھیں مْرگانی چیہالگاں،
آزماں لرزاِتگ
مہر ئے پَھنات ئے شوھاز ا سرگپتگیں،
پدگراں تم کْتگ
بے مْرادیں دِلاں، بینگیں یات ئے ساھگ، پتایگ نہ بنت
ارس مایگ نہ بیت
واھشانی پْریں انگرانی سرا ، پاد سوچگ نہ بنت
ٹپّ دوچگ نہ بنت

رژن ئے دست ئے دل ئے کِشک ئے مٹینگ آ
تو کہ بے سوب اَت ئے، ما اوں دردیگ اتیں
تو گْڑینتگ چَہ وابا ہماساھتا
زندمانی وتی ، گْڈی دیدار ا چمانی آدینک اَت ئے
کس نہ من ایت کہ وابانی تاویل ئے پْشدر،
ملامت بہ بیت
بھت ئے استار ئے ھوری ، جتائی بہ بیت
بیا دوبر ماسگی بلّوکاناں گوش ایں
مارا دروگیں تسلّا یے ہمراہ بہ دئے
راستی ئے پتّراگوات سگ اِت نہ کنت

زرد ئے پاسانی تاویل پچ گپتگیں،
نود کسّہ کن اَنت
پادئے چیر ئے زمین ، چَہ تہاکنز اتگ
گام گام ئے مساپر، نی ہمراہ نہ بنت

نہ پروشاں من اے دیوالا

گمان ئے ساھگا نشتگ ، پدا ستک ءَ شُھازیگ آں
ھما ستکاکہ مہر ئے سرزمین ئے پھَر بندوک اَت

امیتانااُمیتی ئے سپر ، وَ دیریں کُٹینتگ
نزاناں چہ کجا باریں
دری گواتاکلوھے پمناگون اَت کہ بیا مرچی،
تئی بے آزمانیں سرزمین ئے کینگ ئے کَوشا
اجب یک جارے پرینتگ
کہ تئی بُن پیروکی ھند ا
مروچی مہرئے ڈکّال اِنت،

تپاکیں ھمبل اَنت دُژمن،
درآمد ماں دل ئے توکا،
گلامیں پگر ئے واجہ ئی
سما اوسد ئے ڈُکّالی
تپر بے دستگازرتگ
روان اَنت رونگراہاناں
ھمک ھند کہ چمّ شانک ئے
بہ گندئے دردئے سرھال اِنت
نگیگیں مہر ئے اھوال انِت

’’اگاں زورئے منی گپاں!
وتی اوستانی دیوالا
یلا دئے بیا منی ہمراہ
نہ گندئے کینگ ئے آسے ،
نہ مارئے کست ئے کاٹارے
کہ دنیا ئے بہشتا
زندمان ئے داب نوکین اِنت‘‘

دمانے ھُشک و ھیرانی ،
دلاگوں ترکگاجیڑات

منی اے مُھریں دیوالے
ستر آھنڈ لرزان انت،
نہ پروشاں من اے دیوالا
کہ اے دیوال ئے پُشتہ زندمانئے
واب، آگاہ انت

Check Also

فہمیدہ ریاض

کوتوال بیٹھا ہے کیا بیان دیں اس کو جان جیسے تڑپی ہے کچھ عیاں نہ ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *