Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » زندگی  ۔۔۔ گلناز کوثر

زندگی  ۔۔۔ گلناز کوثر

اور پھر۔۔۔۔۔۔
رات کا جھلملاتا ستارہ بجھا
ادھ کھلی آنکھ سے نیند گرنے لگی
مسکراتی ہوئی شاہ زادی،وہ پھولوں بھرا تخت گاتے پرندے کہاں گم ہوئے
ٹوٹتے ٹوٹتے ایک بے ربط منظر دھواں بن کے کمرے میں بہنے لگا
بے بسی۔۔۔۔ بے بسی۔۔۔
کھوج لوں ایک مرتے ہوئے خواب کے ڈھیر سے شاعری۔۔۔
دفعتا ذہن میں جیسے گھنٹی بجی
آج بھی بس نکل جائے گی
کاش دو چار پل اور مل جاتے۔۔۔۔ اچھا چلو۔۔۔۔ پھر سہی
روز کے راستے پر جھکے کاسنی پھول،
شبنم کے ننھے کٹوروں کو بھرتی ہوئی دھوپ،
ٹھنڈی ہواؤں کے جھونکے
مرے حال سے بے خبر
ایک جیسی تکونی چھتوں والے گھر
چند غائب پرندوں کی آواز
گونگی مسافر نگہ۔۔۔۔۔
بس کی کھڑکی سے تکتی ہوئی سوچتی ہے
کہیں آج مل جائے اک بار پھر سے وہی سرخوشی
کام کا جبر، دفتر کے اکھڑے ہوئے لوگ
بے جان آنکھوں سے نیندیں بھگاتے
یونہی بیسبب مسکراتے
چھپا لیں گے جیسے چمکدار چہروں سے لپٹی ہوئی بے رخی
چائے کے ایک وقفے میں شاید ابھی ڈھونڈ لوں۔۔۔۔ پچھلی وارفتگی
کاغذوں کے پلندوں کے نیچے ، درازوں میں یا میز کے پیچھے
تاروں کے گچھے سے الجھا ہوا۔۔۔۔ ایک پل۔۔۔ اک گھڑی
بند شیشوں سے چھنتی ہوئی دھوپ کے بھیس،
پتوں پہ بوسے جماتی ہواؤں کے ملبوس میں
وہ دھڑکتی ہوئی روشنی۔۔۔۔
اور پھر روز کا دن ڈھلا
شام کا گیلا، اکتایا بادل۔۔۔۔
تھکے ہارے۔۔۔۔ سڑکوں پہ بہتے ، بسوں میں بھرے لوگ
بیکار، لمبی مسافت کو اوڑھے ہوئے۔۔۔۔
میں بھی لایعنیت سے بھرے سیل کا ایک حصہ مگر
بے کلی۔۔۔۔ بے کلی۔۔۔۔
آتی جاتی ہوئی چند سانسوں کے آزار میں
جیتے رہنے کی بیگار میں
جانے کیسے۔۔۔۔ کہاں۔۔۔۔۔
کھو گئی۔۔۔۔زندگی۔۔۔۔

Check Also

فہمیدہ ریاض

کوتوال بیٹھا ہے کیا بیان دیں اس کو جان جیسے تڑپی ہے کچھ عیاں نہ ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *