Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » نوشین قمبرانی

نوشین قمبرانی

اے یادگارِشہرِ اجل، وصلِ جاں میں رہ
اے ہجرتوں کے پیڑ، نظر کی اماں میں رہ

خوابوں کے نمکدے سے گزر کر زمیں پہ آ
شیرینیء خیال میں آبِ گماں میں رہ

اْس گْمشدہ وْجْود کی خوشبْو کو ڈھونڈنے
گْم گَشتہ سبزہ زار کی راہِ رواں میں رہ

پھولوں کی عْمر چْن کہ تْو مجھ سے جدا نہ ہو
بن کر ہَوا، ہمیِشگی کے صْبحداں میں رہ

دیوانگی کو چھوڑ کے ملتا ہے گر شرَف
بہتر یہی ہے قافلہ رائیگاں میں رہ

دیدہ ورانِ فن کی گروہ بندیوں سے بھاگ
غارِہنر کی چْپ میں یا کْنجِ نِہاں میں رہ

آنکھوں میں تیری رات ہے اور رات میں سفر
کچھ پل ٹہر بْریدہ شفق آستاں میں رہ

جو داغ جل رہے ہیں یہ لشکر کو سَونپ دے
لَو بن کے اپنی مِٹی کے آئندگاں میں رہ

تیرے لیے نہیں رہی بھیدوں بھری فِضا
اے عْمر خود سے آنکھ مِلا، نیستاں میں رہ

Check Also

یہاں خوش گمانی کا راج تھا  ۔۔۔  ازہر ندیم

یہاں آرزوؤں کی سلطنت تھی بسی ہوئی یہاں خواب کی تھیں عمارتیں یہاں راستوں پر ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *