Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ سید طاہرؔ 

غزل ۔۔۔ سید طاہرؔ 

نسبتیں ہیں آگ سے اور، راستہ پانی کا ہے
کیسے طے ہوگا جو ہم سے فاصلہ پانی کا ہے
خاک تیرے پاؤں چھونے کیلئے بے تاب تھی
ہونہ ہو، توہی یقیناًدیوتا پانی کا ہے
دل کے اندھوں کو ہرا سوجھا ہے تو سوجھے مگر
آنکھ والوں کیلئے تو مسئلہ پانی کا ہے
تم نے سمجھا روشنی کے قتل کا نوحہ جِسے
وہ سکوتِ شام پراک قہقہہ پانی کا ہے
ایک شاعر نے ٹٹو لا کیسۂ آبِ رواں
تم غزل سمجھے ہو جسکو، جائزہ پانی کا ہے
خود فریبی دیکھیئے ،اُس پار جانے کیلئے
کاغذی ہیں کشتیاں اور آسرا پانی کا ہے
میں نے اپنے کل کو دیکھا تو کھلاتھا آج یہ
جس کی خاطرخوں بہے گا واقعہ پانی کا ہے
کون اترا ہے بھلا اس جھیل کی گہرائی میں
یہ بلا کا شوق، اور یہ حوصلہ پانی کا ہے
بے کراں سمجھے تھے طاہرؔ ہم سمندر کا وجود
جاکے دیکھا تو ذرا سا فاصلہ پانی کا ہے

Check Also

گزری اور آنے والی بہاروں کے نام ۔۔۔ نوشین کمبرانڑیں

ہزاروں گنج ہیں جن پر تیرے پیروں کے بوسے ہیں تہہِ خاکِ وطن تو ہے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *