Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ قندیل بدر 

غزل ۔۔۔ قندیل بدر 

آسماں، سورج، شفق، قوس قزح، بادل بنے
جانے کیسے رنگ ہوں جن سے میرا آنچل بنے

تو نے جانے کون سے موسم میں دیکھا تھا مجھے
ایسا تو کچھ بھی نہیں مجھ میں کہ تو پاگل بنے

مجھ کو چلنے کے لیے دو گز زمیں بھی کب ملی
جس طرف بھی پاؤں رکھا راستے دلدل بنے

اس نے میرے خواب دیکھے تو کئی غزلیں ہوئیں
اس نے میرا نام لکھا تو کئی ناول بنے

میرے برگد سے بدن میں سانس کی لو ہے نہ آنچ
تو اگر چھو لے تو شاید یہ کبھی صندل بنے

میرے مشکیزے کا پانی ریت کیسے ہو گیا
اور ہاتھوں کی لکیروں میں یہ کب کربل بنے

کب مرے جوڑے میں مہکے موگرے اور موتیا
کب بدن کے میلے کپڑے ریشمی مخمل بنے

Check Also

ٹکڑیاں (چھوٹی نظمیں) ۔۔۔۔۔ تمثیل حفصہ

۔1۔کشتی جل جاؤ۔۔۔۔۔ جاؤ۔۔۔۔۔۔ چاند کے پار۔۔۔۔ اک ندیا بہتے پانی کی۔۔۔۔ نیند کی لوری ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *