Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ عطا شاد

غزل ۔۔۔ عطا شاد

گہری ہے شب کی آنچ کہ زنجیر در کٹے
تاریکیاں بڑھے تو سحر کا سفر کٹے

کتنی شدید ہے یہ خنک سرخیوں کی شام
سلگا ہے وہ سکوت کہ تار نظر کٹے

سوگند ہے کہ ترک طلب کی سزا ملے
رک جائے گر قدم کی مسافت تو سر کٹے

کیوں کشت اعتبار بھی سرسر کی زد میں ہو
کیا انتظار خلق سے فصل ہنر کٹے

یوں بھی تو ہو کہ سر کے سبب ہو شکست سنگ
یہ بھی تو ہو کبھی کہ شجر سے تبر کٹے

کھل جائیں روشنی پہ مرے پتھروں کے رنگ
اس رات سی پہاڑ کا سینہ مگر کٹے

صدیوں سفر ہے شادؔ مجھے خود مرا وجود
دل سے غبار راہ چھٹے رہ گزر کٹے

Check Also

ایک آواز ہے ۔۔۔ گلناز کوثر

کیا کہوں۔۔۔ایک آواز ہے بھیگے پتوں پہ بارش کی بوندیں بجاتی۔۔۔ بہت کھنکھناتی ہوئی۔۔۔ ایک ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *