Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » وحید نور 

وحید نور 

ریاستیں ہیں ریاستوں میں غلام ابنِ غلام چْپ ہیں
خطیب و قاضی، شیوخ و مفتی ، ہیں جتنے واعظ ، امام چْپ ہیں

وہ اہلِ دانش وہ اہلِ حکمت ہوئے قصیدے جو لکھ کے خاموش
صلہ ملے گا ستائشوں کا، ہْوا ہے کچھ اہتمام، چْپ ہیں

مصوّروں کے ہیں رنگ پیلے، مغنّیوں کے بھی لب مقفّل

وہ سچ کے داعی کہ سچ ہی کہنا، تھا جن کا کارِ مدام ، چْپ ہیں

فنون مکتب کی ڈائری کے بکھر رہے ہیں کمال پنّے
قلم قبیلہ ہے رخصتوں پر، ادب کے سارے نظام چْپ ہیں

سِتار کی تار سے الجھتی کٹی ہوئی انگلیاں پڑی ہیں
جنازہ فن کا نکل رہا ہے ہْنر کے عالی مقام چْپ ہیں

سفر تھا جن کے قدم سے روشن انھی کے پیروں میں بیڑیاں کیوں؟
اور اس تباہی کے سلسلے کو جو دے سکیں اختتام، چْپ ہیں

خطیب و قاضی، ہْنر کے داعی، قلم قبیلہ کہ اہلِ دانش
تمام چْپ ہیں، تمام چْپ ہیں، تمام چْپ ہیں، تمام چْپ ہیں

Check Also

The Axiom of connectivity

نوشین قمبرانی زندگی ہے روح مزیخ اور زمیں ہم ۔روح ہیں اپنے اپنے اُوربِٹ کے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *