Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ انجیل صحیفہ

غزل ۔۔۔ انجیل صحیفہ

ناچتے ناچتے محبوب کی چھب چاہتا ہے
عشق بازار میں مٹنے کا سبب چاہتا ہے

چیخ آنکھوں سے نکل آئی ہے لاوا بن کر
ہجر پھر گریہ کوئی آخرِ شب چاہتا ہے

میں تجلی سے تیری طور ہوئی جاتی ہوں
اور غضب یہ ہے کہ تو اور غضب چاہتا ہے

اْس کی خواہش ہی نہیں کوئی مجھے چھونے کی
چاہتا وصل ہے ،پر وصل عجب چاہتا ہے

دل کوئی محل بنا لیتا ہے صحراؤں میں
اور پھراس کے مضافات میں سب چاہتا ہے

دل میں آنے کی اجازت تو وہ دیتا ہے مگر
فاصلہ چاہتا ہے حدِ ادب چاہتا ہے

پہلے ہوتی ہے پرکھ سوز کی دنیا سے پرے
پھر اترتی ہے وہ انجیل جو رب چاہتا ہے

Check Also

نثری نظم ۔۔۔ نور محمد شیخ

خود کو خوش اَسلُوبی کے ساتھ زندہ رکھو جینا بہت اہم جیے جاؤ حصولِ منزل ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *