Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ وصاف باسط

غزل ۔۔۔ وصاف باسط

سفر کا شور تھمے، رک کے اک نظر دیکھوں
میں منظروں میں کبھی دھند اور شجر دیکھوں

خدا کرے کہ مجھے لفظ تیرے مل جائیں
میں ان کو جھیل کے صفحوں پہ درج کر دیکھوں

تمہارے ساتھ کسی اور راستے پہ چلوں
ہوا کے پار کہیں آسماں کا گھر دیکھوں

مجھے پکارے، تْو چیخے، صدائیں دیتا رہے
میں دور ہی سے تیرا خوف اور ڈر دیکھوں

وہ انگلیوں سے ستارے زمیں پہ پینٹ کرے
کنارے بیٹھ کے میں اس کا یہ ہنر دیکھوں

اک ایسی راہ پہ جاؤں جہاں پہ چاروں طرف
کہیں غزل تو کہیں نظم کا نگر دیکھوں

Check Also

شہناز شبیر 

اَدھورا پن (روز گل کے نام) چھوٹی سی اس دنیا میں اِ ک میں اور ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *