Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ وھاب شوھاز

غزل ۔۔۔ وھاب شوھاز

راتیں اپنی ، اشک ہمارے اپنے ہیں
پھول تمہارے ، کانٹے سارے اپنے ہیں

چاند مزاجاً تجھ سا ہے ، یہ تیرا ہے
تارے ہم سا ہیں ، یوں تارے اپنے ہیں

اْن سے کہہ دو کرنوں سے دامن بھرلیں
جلتے سورج کے انگارے ، اپنے ہیں

خوشبو ، تیرے ہونے کی ، پابند سہی
رنگوں کے بے ربط اشارے اپنے ہیں

دروازے پر تالہ ، تیرے نام کا ہے
اِس کمرے کی اینٹیں گارے اپنے ہیں

اْس کشتی کو ، کون ڈبوپائے جس کے
دریا، طوفاں، موج ، سہارے اپنے ہیں

آؤ ، گھر میں خوشیوں کا ، ماتم کرلیں
اپنے ہی ، جیتے ہیں ، ہارے اپنے ہیں

قدموں کی آہٹ سے ، واقف ہیں اپنے
بستی کی گلیاں ، چوبارے ، اپنے ہیں

ہم سے کیوں منہ موڑا ہے تنہائی میں
ہم تو ہیں شوہاز ، تمہارے اپنے ہیں

Check Also

کورا کاغذ! ۔۔۔  امداد حسینی

(“آصف فرخی“ کے لیے)   وہ جو کورا کاغذ میز پر پڑا ہوا ہے اس ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *