Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » وحشت کی موت ۔۔۔ اسامہ امیر

وحشت کی موت ۔۔۔ اسامہ امیر

تم جس وقت میرے پاس نہیں تھی
مرے سرہانے سوکھے ہوئے گلاب
تمھارے بدن کی خوشبو سے مہک رہے تھے
مجھ پر اک عجیب سی وحشت طاری ہورہی تھی
اور اس وحشت کا دورانیہ
اس قدر مختصر تھا
نہ تو میں اس خوشبو سے مَس ہوا
نہ ہی وحشت سے دو چار

رات ڈھل رہی ہے
صبح کے آثار نمودار ہو رہے ہیں
بستر کی سلوٹیں
مجھے اٹھانے کے لئے چیخ رہیں ہیں
میں آہستہ آہستہ آنکھیں کھول رہا ہوں
خواب دور ہوتا جا رہا ہے

“انا اللہ وانا علیہ راجعون”

Check Also

کورا کاغذ! ۔۔۔  امداد حسینی

(“آصف فرخی“ کے لیے)   وہ جو کورا کاغذ میز پر پڑا ہوا ہے اس ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *