Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » ایک پرانی غزل ۔۔۔ فراز محمود

ایک پرانی غزل ۔۔۔ فراز محمود

تو مجھے ایک جھلک بھی نہیں دکھلانی کیا؟
صرف موسی پہ عنایت تھی یہ فرمانی کیا؟

میں کسی شخص کہ مرنے پہ بھی غمگین نہیں
خاک اگر خاک میں ملتی ہے تو حیرانی کیا؟

خط میں لکھتے ہو بہت دکھ ہے تمہیں ہجرت کا
یار جب جا ہی چکے ہو تو پشیمانی کیا؟

میری آنکھوں میں ذرا غور سے دیکھ اور بتا
ان سے بڑھ کر ہے بھلا دشت میں ویرانی کیا؟

نہ غمِ یار ہو لاحق نہ غمِ دوراں ہو
آخر اب زیست میں اس قدر بھی آسانی کیا

میری مٹی میں الگ شے ہے کوئی کوزہ گر!
وقتِ تجسیم مری خاک نہیں چھانی کیا؟

Check Also

یاخداوند قُدرتانی ۔۔۔ شوکت توکلی

یا حْداوند قْدرتانی کْل چاگِرد مالِکئے ھْشک تر و کوہ وکھلگر مزن کسانئے واژہے باطنَئے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *