Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ نعمان صدیقی 

غزل ۔۔۔ نعمان صدیقی 

کوئی وحشت نہیں سمندر سے
میں توخود ہٹ گیا ہوں منظر سے

گو مکمّل دکھائی دیتا ہوں
مجھکو غم کھا گیا ہے اندر سے

مِرے زخموں پہ ہائے ہر کوئی!
آج مرہم لگائے خنجر سے

میرا سویا نصیب جاگ اٹھا
جب سے تو مل گیا مقدر سے

شیشہء دل بہت ہی نازک تھا
ہائے ٹکرا گیا وہ پتھر سے

جب دلیلیں نہ دے سکا وہ بھی
لوگ اْٹھتے گئے برابر سے

عمر تو خواب دیکھنے میں کٹی
اور پھر آ لگا وہ بستر سے

ایک دھڑکا سا ہے لگا نعمان
کوئی تو جھانکتا ہے باہر سے

Check Also

یاخداوند قُدرتانی ۔۔۔ شوکت توکلی

یا حْداوند قْدرتانی کْل چاگِرد مالِکئے ھْشک تر و کوہ وکھلگر مزن کسانئے واژہے باطنَئے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *