Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل  ۔۔۔ اورنگ زیب

غزل  ۔۔۔ اورنگ زیب

ہَوس نے مجھ سے پوچھا تھا تمہارا کیا ارادہ ہے
بدن کارِ محبت میں برائے استفادہ ہے

کبھی پہنا نہیں اس نے مرے اشکوں کا پیراہن
اْداسی میری آنکھوں میں ازل سے بے لبادہ ہے

بھڑک کر شعلہء وحشت لہو میں بْجھ گیا ہوگا
ذرا سی آگ تھی لیکن دھواں کتنا زیادہ ہے

اگر تم غور سے دیکھو رخِ مہتاب کم پڑ جائے
فلک پر اک ستارے کی جبیں اتنی کشادہ ہے

مجھے مسکن سمجھتے ہیں عجب آسیب ہیں غم کے
میں اک دو سے نمٹ بھی لوں یہ پورا خانوادہ ہے

اْسے دھندے سے مطلب ہے وہ دیمک بیچنے والا
اِسے وہ خاک سمجھے گا، یہ خوابوں کا برادہ ہے

ہم اس سے چاہ کر بھی بچ نہیں سکتے کسی صورت
نبھانا پڑتا ہے اِس کو، محبت ایک وعدہ ہے

مجھے شطرنج کے خانوں میں چلنا تْو سکھائے گا ؟
میں فرضی بن چکا کب کا، تْو اب تک اک پیادہ ہے

نجانے کاتبِ تقدیر نے کیا لکھ دیا اس پر
مری تقدیر کا صفحہ نہ سیدھا ہے نہ سادہ ہے

میں اس حالت میں زیب آخر کہاں چلتے ہوئے جاؤں
نہ مجھ میں حوصلہ باقی نہ منزل ہے نہ جادہ ہے

Check Also

یاخداوند قُدرتانی ۔۔۔ شوکت توکلی

یا حْداوند قْدرتانی کْل چاگِرد مالِکئے ھْشک تر و کوہ وکھلگر مزن کسانئے واژہے باطنَئے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *