Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔۔زاھدہ رئیس راجی

غزل ۔۔۔۔زاھدہ رئیس راجی

آنکھوں میں کسی نے مری ڈر دیکھ لیا ہے
قسمت کے ستاروں کا سفر دیکھ لیا ہے

اک ڈوبتی کشتی کو بچانے کی تھی کوشش
ساحل سے جسے ، تم نے بھنور دیکھ لیا ہے

ہم اپنی حقیقت کے لئے آپ بہت ہیں
تم نے ہمیں کیا جانے کدھر دیکھ لیا ہے

جینے کے لئے ایک بہانہ تھا ضروری
سو ہم نے تمہیں ایک نظر دیکھ لیا ہے

شطرنج پہ جیون کے ہر اِک شخص ہے مہرہ
قدرت کا عجب ہم نے ہنر دیکھ لیا ہے

طوفان کا رُخ جب سے ہوا ہے مری جانب
احساس نے آزردہ جگر دیکھ لیا ہے

لفظوں کی حقیقت سے اُٹھایا ہے جو پردہ
ہر شخص کی باتوں کا ہنر دیکھ لیا ہے

کچھ بھی ہو عذابوں میں سرابوں کی حقیقت
خوابوں نے مری شب کو، سحر دیکھ لیا ہے

درکار ہے سب کو اسی دھرتی پہ ٹھکانہ
ہم نے مگر آکاش پہ گھر دیکھ لیا ہے

اس شب کے اندھیرے کو کوئی چِیر دے راجی
خوابوں نے اُجالوں کا سفر دیکھ لیا ہے

 

Check Also

یہ تو پرانی ریت ہے ساتھی! ۔۔۔ گل خان نصیر

جتنے ہادی رہبر آئے انسانوں نے خوب ستائے کَس کے شکنجہ آرا کھینچا ہڈّی، پسلی، ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *