Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » کتاب پچار » عبداللہ جان جمالدینی ۔۔۔۔ اِسحاق خاموش

عبداللہ جان جمالدینی ۔۔۔۔ اِسحاق خاموش

(ڈاکٹر شاہ محمد مری ئے کتابئے سرا چمشانکے)

کتابئے سیادی گوں بنیادما باز کْہن اِنت۔کتاب نا ایوکا بنیادم ئے نزّیکتریں سنگتاں چہ یکّے ، اے بنیادم ئے ذہنی بْودِشت و معلومداریا گیش ودّینیت۔باز ہمے گْشیت کہ دْنیائے معلومداری رسانک ئے تیزگامی سَوبا او کمپیوٹرو موبائل فون ئے گیشیں کارمرزیا گوں کتابئے اَرزشتئے سرا بازیں اثرے کپتگ۔ بلئے دومی نیمگا اے ہم گْشگ بیت کہ سائنس و ٹیکنالوجی ئے تیزگامیا ابید ہم مئے وڑیں چاگردانی تہا 70 درصد معلومداری او زانگ و زانشت ئے مستریں وسیلگ کتاب اِنت۔
من چہ سنگت جمیل امامہ مْدام جْست کناں کہ نوکیں کئی کئی کتاب چاپ و شِنگ بْوتگ گْڑا جمیل منا ہمک نوکیں کتابئے بارواسرپدی دنت۔ اے آنہی مہروانی اِنت۔اے وہدی’’ سِچکان‘‘،’’بلوچستان اکیڈمی‘‘ ’’اِستین‘‘،’’اِزم‘‘’’ بلوچی اکیڈمی کوئٹہ‘‘ او ’’سنگت اکیڈمی‘‘ نیمگا وہد پہ وہد جوانیں کتاب چاپ و شِنگ بنت۔ بلئے کتابانی چاپ و شِنگ ئے ردِا ’’ بلوچی اکیڈمی کوئٹہ‘‘ او سنگت اکیڈمی کوئٹہ‘‘ ئے گام چہ درستان تیز تِر اِنت اوگوستگیں لہتے سالانی تہا اے اِدارہاں کتابانی ہما مڈّی بکشاتگ کہ چِدو پیسر اے رپتارا کتابانی چاپ و شِنگ ئے کار نہ بْوتگ۔
پروفیسر عبداللہ جان جمالدینی ئے اِزم و زِند ئے سرا ڈاکٹر شاہ محمد مری ئے کتاب ’’عبداللہ جان جمالدینی ‘‘ عشاق کے قافلے ئے 25 می رِد اِنت کہ چہ سنگت اکیڈمی ئے نیمگا چاپ و شنگ بْوتگ۔ اے کتاب دو رندا چاپ و شِنگ بْوتگ۔اولی بَرا 2007 آاو نوکتریں چاپ 2017 اِنت او کتاب ئے نِہاد 300 کلداراِنت۔اے کتاب اْردو تہا اِنت۔
ڈاکٹر شاہ محمد مری یک مہروانیں اِنسانے۔منی و آنہی پجّاروکی گوں ماہتاک ’’ نوکیں دور‘‘ ئے زمانگا چہ اَست اِنت کہ من یک نا پوہ نہ زانتکاریں نبشتہ کارو شاعرے او ہرچی کاگدانی سرا سیاہ کْت و دیم دات ڈاکٹر صاحبا شرّ کْت و ’’ نوکیں دور‘‘ ئے تہا چاپ و شِنگ کْتنت۔پدا ماہتاک ’’ سنگت‘‘ دیما گوست۔۔۔ ڈاکٹر صاحب ئے ہما ٹیم و ہما پالیسی ورنائیں نبشتہ کارانی دِلبڈّی او اْردو و بلوچی تہا راجدپتر،زْبان ، فلسفہ او دری زْبانانی رجانکانی جوانیں نکاناں گوں مئے وڑیں نا اشناہاں اژناگ کنَگ۔
کتاب ’’ عبداللہ جان جمالدینی‘‘ 224 ئے تاکدیم انت او ڈاکٹر صاحب ئے پیسری کتابانی وڑا یک شرّیں کتاب یے۔
چرے کتابہ وانگا ہمک وانوک چہ واجہ عبداللہ جان جمالدینی زِند ئے لبزانکی ، چاگردی،سیاسی و ہمک تکا گوں جوانیا سر پد بْوت کنت۔تاکدیم 15 آ ڈاکٹر شاہ محمد مری عبداللہ جان جمالدی ئے شخصیت ئے باروا نبشتہ کنانا پہ درور گْشیت :
’’ٹالسٹائی کے ناول’’ وار اینڈ پیس ‘‘کے سمجھنے میں بڑا مسئلہ یہ ہے کہ اِس ناول میں کِرداروں کی تعداد500 ہے۔ ہر ایک کردار کے تین تین چار چار حصّے ہیں۔ناول نگار کہیں ایک نام استعمال کر رہا ہوتا ہے تو کہیں دوسرا۔ یہی کنفیوژن اس ناول کو دو تین بار پڑھنے پہ مجبور کرتی ہے۔ جب میں نے یہ شکایت سی آر اسلم سے کی تھی تو اس نے بتایا تھا کہ خود اس نے یہ ناول نو بار پڑھاتبھی جاکر وہ اس سے مکمل طور پر محظوظ ہو سکا تھا۔اْس کا انکشاف تھا کہ فیض صاحب کو یہ کتاب جیل میں تیرہ بار پڑھنی پڑی تھی‘‘
راستی ماما عبداللہ جان جمالدینی بْلند و بالائیں بازیں کارِستانی واہْند اَت۔اے کتاب چوناہاعبداللہ جان جمالدینی زِندو اِزم وآئی کارانی باروا اِنت بلئے چریشی وانگا وانوکا لبزانک و سیاست ئے بازیں چِست و ایرانی باروا معلومداری رسیت۔کتابئے سرا سرجمیں چمشانکے دَیگ منی گونگیں ہچ مزانتے وسا چہ دَر اِنت۔ آ، ہم ڈاکٹر شاہ محمد مری وڑیں دانشور، لبزانت و سکالرے ئے۔گْڑا گہتر اِنت کہ من کتابئے کسان کسانیں بہراں گوں شْما ہور پدا بہ واناں۔گوں ڈاکٹر صاحبئے قلم ئے نقشاں۔
’’یہاں ماما عبداللہ جان کے ایک ماموں کا ذِکر کرنا بْہت ضروری ہے۔ اسے پتہ نہیں کہاں سے حافظ کا کلام پڑھنے کی لت پڑ گئی۔صبح شام اْٹھتے بیٹھتے دِیوانِ حافظ دْہراتا رہتا۔ مشہور تھا کہ حافظ کا مطالعہ انسان کو پاگل بنا لیتا ہے۔سو وہ پاگل ہوگیا۔
رحمٰن بابا کے کلام کے بارے میں بھی یہی مشہور کردیا گیا ہے اور اس افواہ کو تقویت دینے کیلئے بْہت سے قصّے گھڑ لئے گئے ہیں۔ کہتے ہیں ایک عالم نے اس افواہ کو باطل قرار دینے کی ٹھان لی۔ اس نے رحمان بابا کے دِیوان کو رسّی سے درخت پر لٹکایا اور دْور کھڑے ہوکر اْسے پتھر مارنے لگا کہ دِیکھو لوگو اِس کتاب میں کچھ نہیں ،یہ کسی کو پاگل نہیں بنا سکتی۔
لوگو ں نے اس سے کہا کہ تْم خود سوچو، جو کچھ کررہے ہو یہی تو پاگل لوگ کرتے ہیں۔ الغرض ماما کا یہ ماموں پاگل بنا۔ اْس کا نام تھا عبداللہ۔ اْسی عبداللہ کا نام بعد میں بھانجے پر رکھا گیا۔ حافظ شیرازی کا پاگل بنایا ہوا گھرانا‘‘۔ تاکدیم 25
*
’’ میر عبداللہ جان چوتھی کلاس میں پڑھتا تھا اور اس کا بھائی دسویں میں۔ یہاں عبداللہ جان سخت بیمار پڑتا ہے۔ اے ٹائیفائیڈ ہوگیا تھا۔ اس کا چچا اسے کوئٹہ سے نوشکی لے گیا۔ جب صحت یاب ہوا تو اْسے وہیں نوشکی سکول میں داخل کردیا گیا۔اْس نے پانچویں جماعت پاس کی۔ مقصد اس ٹائیفائید کابہت ہی اہم تھا۔اْس نے اسے کوئٹہ میں آنے والے 31 مئی 1935 کے آدم خور زلزلے سے بچالیا تھا‘‘ تاکدیم 48۔
کتابئے تہا نبشتہ اِنت کہ صاحبزادہ ادریس پرفیسر عبداللہ جان جمالدینی ئے اْستاداں چہ یکّے ات او چہ کسانیا معذور ات ۔بلئے علم و زانش ئے سر چمّگے ات۔آ ، پشتو ئے یک جوانیں شاعرے ات او ہما زبانئے اولی ناول نویسے ات۔آنہیا 1927 آ چہ اسلامیہ کالجا اکنامکسا بی اے آنرز کْت۔پدا علی گڑھا شْت او ایم اے ایل ایل بی ئے ڈگری دست گِپت۔پدا مردانا وکالت ئےِ بِندات کْت بلئے آنہی جِند ئے گْشگئے رِد ا ’’ دروگئے دْکّانا‘‘ گیش روانہ کْت۔سکّیں اْصول پسندے ات ،وکالت ئےِ یلہ دات و وانگ و وانینگ ئے تکا اَتک۔ڈاکٹر شاہ محمد مری صاحب نبشتہ کنت کہ :
’’ایک دِن ایک موکل قتل کا مقدمہ لے کر وکیل صاحب کے پاس آیا۔ اس نے صاحبزادہ کو اپنا پْورا کیس بتایا۔ صاحبزادہ نے اس کی روداد سْن کر پوچھا:
’’ تو گو یا تْم نے قتل کیا ہے‘‘؟
’’ جی ہاں‘‘ موکل بولا۔
’’اور مْجھے تْمہیں بری کروانا ہے‘‘؟
’’جی ہا ں‘‘
صاحبزادہ صاحب نے اپنی وکالت کی ساری کتابیں کھڑکی سے باہر پھینک دیں اور کہا۔
’’ میں جھوٹ نہیں بولتا‘‘تاکدیم 55
ایش اَت واجہ عبداللہ جان جمالدینی ئے اْستاداں چہ یکّے۔
ماں 1950 آ جوڑ بْوتگیں ’’ لٹ خانہ تحریک‘‘ ، ’’ فی الحال سٹیشنری مارٹ‘‘ او ’’ بلوچی زْبان و ادب ئے دِیوان‘‘ ئے باروا ڈاکٹر شاہ محمد مری نبشتہ کنت کہ:
’’ ان دوستوں کے طفیل 1952ء کا سال بلوچی ادب کی تاریخ میں اہم سال ثابت ہوا۔گْل خان نصیر نے بالآخر اپنا بلوچی کلام یکجا کرکے کتابت کیلئے دے دیا۔ اس کی کتاب ’’ گْلبانگ‘‘ اسی برس شائع ہوئی۔یہ کتاب ’’بلوچی زبان و ادب ئے دیوان‘‘ہی کہ طرف سے شایع ہوئی۔کتاب کی قیمت دو روپے تھی مگر اِس کم قیمت پر بھی کوئی خریدنے والا نہ تھا۔آخر مجبو ہوکر گْل خان نصیر کی ہدایت پر اسے مفت تقسیم کرنا پڑا‘‘۔ تاکدیم 88
عبداللہ جمالدینی آگوں وتی زْبان و لبزانکا عشق اَت۔آنہی جْہدو کوشستانی برکتا 1985 آ ماں بلوچستان یونیورسٹیا ایم اے بلوچی ئے کلاس بندات کنائینت اَنت۔ ڈاکٹر صاحب نبشتہ کنت کہ: ’’ اْس نے گھوم پھر کر طالب علم ڈھوندے، انہیں داخلہ دلوایا۔ اور بْہت محنت و شفقت سے پڑھایا‘‘۔
عبداللہ جان جمالدینی برات آزات جمالدینی آ چہ کراچی آ ماہتاک ’’ بلوچی‘‘ چاپ و شِنگ کْت و بلوچی لبزانک ئے گیمْرتگیں درچک ئے رْست و رْدوما وتی شپ و روچ یکّ کْتنت۔آنہیا پہ ماہتاک ’’ بلوچی ‘‘ ہاترا بلوچستانئے کْنڈکْنڈا گشت و نکان و پوڑی جم کْت۔ اے رِد ا کتابئے تہا ڈاکٹر شاہ محمد مری نبشتہ کنت کہ:’’ناگہاں ایک روز پتہ چلا کہ آزاد ہسپتال میں داخل ہے۔ تلاش کرکے ملا۔وہ چارپائی پر دراز تھا۔تھکن و بیماری کی کمزوری ظاہر تھی مگر پھر بھی ہمت والی ضد ، اْٹھ بیٹھ کر معانقہ کیا۔بولنے لگا۔میں ’’رسالہ بلوچی ‘‘کیلئے چندہ کرنے مکران گیا۔ بس میں رش بْہت تھا ، جگہ نہیں تھی۔ اس لئے چھت پر بیٹھنا پڑا۔وہاں مجھے سردی لگی‘‘۔ مجھے بْہت غصہ آیا مگر اب تک پتہ نہیں کہ وہ غصہ اصل میں کس پہ تھا۔ آزات پہ؟ بس پہ؟ کچّی سڑکوں پہ؟یا پورے نظام پہ؟‘‘
زمانگ 1956 اِنت و یک کماشے پہ بلوچی زْبان لبزانک ئے ہاتراچینچو سکّی کشّیت۔
عبداللہ جان جمالدینی ئے ایر کْرتگیں ’’ بلوچستان جْمعہ پارٹیBJP او پدا بلوچستان سنڈے پارٹی BSP جتائیں کِسّہ یے کہ تاں 24 چار سالالبزانک دوست، فلاسفر، شاعر، نبشتہ کار ، سیاست زانت اوشاگردانی دِیوان جم اِت۔
کتابئے تہا میر عبداللہ جان جمالدینی ئے نبشتہ کْتگیں کتابانی لڑے ہم دَیگ بْوتگ۔
۔1۔ لینن کی کتاب ’’ دیہات کے غریب‘‘ کا کیا ہوا ترجمہ
۔2۔بلوچستان میں سرداری قبائلی نظام کا سیاسی پس منظر
۔3۔مرگِ مینا
۔4۔لٹ خانہ
۔5۔ شمع فروزاں
۔6۔دو جلدوں جتنا غیر مطبوعہ ، مگر موجود محفوظ کام
۔7۔ انقلابِ ایران (ترجمہ)
۔8۔ کردگال نامک
او پدا ڈاکٹر شاہ محمد مری آ اے کتابانی سرا جوانیں رنگے چمشانک داتگ۔
کْہنیں شاعری ئے شوہازا عبداللہ جان جمالدینی آ مکرانئے ترّو تاب کْت او آنہیا مْلّا فاضل، حسن زرگر او مْلّا اسماعیل ئے شاعری در جت و شوہاز اِت۔
عبداللہ جان جمالدینی آ وتی ہمراہ و سنگت مْدام دوست داشتنت۔آنہی سنگت و ہمراہ و تاکّار کہ قید و بند کنگ بیت تہ آنہی در کنگ ئے ہاترا ہزار کلدار درکار بیت تہ ہزاریں کلدار گوں آنہیا در نیا اَنت اے بابتا ماما عبداللہ جان جمالدینی نبشتہ کنت کہ :
’’غْلام جان کو جیل سے رہائی دینے کیلئے ایک ہزار روپے کا بندوبست کرنا ہم جیسے تنگ دست لوگوں کیلئے بْہت بڑا مسئلہ تھا۔ بھیک مانگنے کے علاوہ کوئی راہ نہ تھی۔گرتے پڑتے بمشکل کراچی پْہنچا۔ مال و دولت اور امیروں ساہوکاروں کے اس شہر میں مجھ جیسا بے سر و ساماں انسان دو ہفتے کی بھاگ دوڑ کے بعد صرف چار سو روپے جمع کر سکا۔‘‘ تاکدیم 147
کتابئے تہا دیمترا نبشتہ اِنت کہ’’عبداللہ جان جمالدینی نے بلوچی قدیم شاعر و دانشور مْلّا فاضل کی قبر ڈھوندنے مکران کے دور افتادہ گاؤں مند کا سفر کیا۔اور بالآخر قبر ڈھونڈ نکالی اور اس کی زیارت کی۔ اس سفر کو اس نے ’’ فاضل ئے زیارت‘‘کے نام سے قلمبند کیا‘‘۔تاکدیم 149
عبداللہ جان جمالدینی آ بازیں کتابانی سرا چمشانک او پیشگال نبشتہ کْت چو کہ محمد حسین عنقا ’’ توار‘‘ او ’’ رحیلِ کوہ‘‘،آدم حقّانی ئے شعرانی دپتر ’’ درون‘‘،عباس علی زیمی ئے ’’ ہینّار‘‘ او ’’ الہان‘‘عنایت اللہ قومی ئے ’’ زِرد ئے ارمان‘‘ ڈاکٹر فضل خالق ئے’’ گچین گنج‘‘بشیر بیدار ئے ’’ گوربام‘‘ ،’’ نوکیں تام‘‘او اکبر بارکزئی ئے شعرانی دپتر’’ روچہ کئے کْشت کنت‘‘۔
ڈاکٹر شاہ محمد مری ئے اے کتاب عبداللہ جان جمالدینی ئے باروا ہمک تکا یک سرجم و برجمیں کتابے۔

Check Also

پریم مندر!۔ ۔۔۔ مبصر۔ عابدہ رحمان

کتاب کا نام :  پولٹ  بیورو مصنف  :  ڈاکٹر شاہ محمد مری صفحا ت  :  ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *