Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ بلال اسود

غزل ۔۔۔ بلال اسود

جھیل آنکھوں کی چمک کیسے مجھے کھنچتی ہے
یہ تیرے خواب تلک کیسے مجھے کھینچتی ہے

گر تو دِکھ جائے تو مڑ مڑ کے تجھے دیکھتا ہوں
تیری اک اور جَھلک کیسے مجھے کھینچتی ہے

دوڑ پڑتا ہوں میں ہر بار سرابوں کی طرف
یہ تمنّا کی دھنَک کیسے مجھے کھینچتی ہے

پاک رخسار نے چکّھا نہ کبھی غم کا نمک
تیری نم ہوتی پلک کیسے مجھے کھینچتی ہے

میں سرِ شام ہی اس سمت نکل جاتا ہوں
ایک سنسان سڑک کیسے مجھے کھینچتی ہے

میرا دل چاہتا ہے جا کے بکھر جاؤں وہاں
تیرگی سمتِ فلک کیسے مجھے کھینچتی ہے

کس قدر کھینچتا ہوں ٹوٹنے لگ جاتا ہے
پھروہ رشتے کی لچک کیسے مجھے کھینچتی ہے

موت کے ہاتھ میں ہیں میری طنابیں اسود
دل یہ جاتا ہے دھڑک کیسے مجھے کھینچتی ہے

Check Also

بانجھ بنجھوٹی ۔۔۔ انجیل صحیفہ

میں نے  کثرت سے آنکھوں کی بینائی خوابوں پہ خرچی ہے سو آنکھ اب کوئی ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *