Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » قندیل بدر

قندیل بدر

چاند کی کرنوں سے نہلائی گئی ہوں
رات کو میں خواب میں کس سے ملی ہوں
روشنی کی تتلیاں اڑتی ہیں ہر سو
ایک ایسا باغ ہے جس کی کلی ہوں
جس جہاں میں پھول اگتے ہیں فلک پر
اس جہاں کی سیر میں کرتی رہی ہوں
اپنے ہاتھوں میں پہن کے رنگ سارے
اپنی پیشانی پہ سورج ٹانکتی ہوں
تو کہیں کہرے میں مجھ سے کھو گیا ہے
اور میں روتے روتے اندھی ہو گئی ہوں
آسماں پر بننے لگتی ہیں لکیریں
جب ہتھیلی پر میں انگلی پھیرتی ہوں
ہاں جو مریم نے مجھے تحفے میں دی تھی
میں اسی چادر سے خود کو ڈھانپتی ہوں
تو میرے خلیوں کو سانسیں دے رہا ہے
میں تری آنکھوں میں جگنو رکھ رہی ہوں
کچھ دعائیں رکھ کے اک جلتے دیے میں
پھر ہواؤں پر میں گرہیں باندھتی ہوں
رات کس نے جھیل میں قندیل رکھی
اب کنارے سے ستارے چن رہی ہوں

Check Also

بانجھ بنجھوٹی ۔۔۔ انجیل صحیفہ

میں نے  کثرت سے آنکھوں کی بینائی خوابوں پہ خرچی ہے سو آنکھ اب کوئی ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *