Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » منتظر ۔۔۔ احسان اصغر

منتظر ۔۔۔ احسان اصغر

کبھی بہتے پانی پہ تم نے
بھڑکتی ہوئی آگ دیکھی ؟
کبھی تم نے سورج میں
پڑتے ہوئے بے تحاشہ بھنور
اپنی آنکھوں کے شفاف عریانیوں میں اتارے؟
تمہارے لیے اجنبیت ہے!
چاروں طرف پھیلتی دھند میں۔۔۔ہو گی !۔
لیکن مرے آئنے میں تو منظر کا منظر
چمکتی ہوئی دھوپ ایسا نکھرتا ہوا ہے
میں تجرید کے بیکرانے میں یوں گھومتا ہوں
کہ جیسے مجھے معرفت ہے
مرے بچپنے کے کھلونوں سے
کونوں سے
جن میں بھٹکتا لڑکپن کی جانب دھکیلا گیا تھا۔۔۔

زمانہ عجب دھند ہے !۔
جیسے گزرا ہوا کل۔۔۔اک آتا ہوا کل
اور ان کے کہیں درمیاں آج !۔
جس کا کوئی بھی پیمبر نہیں ہے!۔
نہ مصحف ہے کوئی
۔۔۔کتابیں تو آتے ہوئے کل کی پیشین گوئیوں سے
گزرے ہوئے کل کے بے مقصدیت سے بھرپور قصوں سے
اس دھند کے صرف چوتھائی حصے کے پر کاٹتی ہیں !۔

۔۔۔مرے نیم تاریک کمرے میں ایسا اک امکان ہے
جو تمہاری نگاہوں سے اوجھل رہے گا
کتابوں کی الماریاں
میرے سینے کی چنگاری سے آگ پکڑیں
تو جل جائیں قرنوں سے موجود الفاظ کی خوش رعایت
رفاقت کا نشہ لیے!۔

میں ابھی تک جو شفاف امکان اٹھانے کی سادہ روایت سے پیوست ہوں
منتظر ہوں پنپتی ہوئی شعلگی کا
جو تجرید کے سردخانوں میں آہستہ آہستہ بھڑکے گی
اور لفظ ہئیت کے ان تجربوں سے الگ
اس مجرد سے احساس کا تجربہ بن سکیں گے
کہ میں جس کے دورانیے میں
مرا عصر۔۔۔
دونوں ہی خاموش بیٹھے لرزتے رہیں گے!۔

Check Also

فہمیدہ ریاض

کوتوال بیٹھا ہے کیا بیان دیں اس کو جان جیسے تڑپی ہے کچھ عیاں نہ ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *