Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » نظم ۔۔۔ زہرا بختیاری نژاد/احمد شہریار

نظم ۔۔۔ زہرا بختیاری نژاد/احمد شہریار

میں جبراً تم سے نفرت کروں گی
تمہارے عشق سے
میری زندگی کے حصے بخرے ہوجائیں گے
میں پانی پیتی ہوں
تو اس میں
تمہارے بوسے کا ذائقہ ہوتا ہے
اور میرا ایک ٹکڑا
گلاس میں گرجاتا ہے
تکیہ
میرے لمبے بالوں کو چھوڑ کر
تمہارے چھوٹے بالوں سے چپکا ہوا ہے
میرے خیال کا ایک ٹکڑا
تکیے پر رہ جاتا ہے
یہ سب ایک طرف
میں گھر کی کھڑکی کھولتی ہوں
تو گلی سے تمہاری خوشبو آتی ہے
میری دیوانگی کا ایک حصہ
گلی میں رہ جاتا ہے۔۔۔
میں جبراً
تم سے نفرت کروں گی
میں پانی نہیں پیوں گی
تکیے پر سر نہیں رکھوں گی
اور گھر کی کھڑکی
ہمیشہ کے لئے بند کردوں گی
میں جبراً تم سے نفرت کروں گی۔۔۔

Check Also

یہاں خوش گمانی کا راج تھا  ۔۔۔  ازہر ندیم

یہاں آرزوؤں کی سلطنت تھی بسی ہوئی یہاں خواب کی تھیں عمارتیں یہاں راستوں پر ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *