Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ نادر عریض

غزل ۔۔۔ نادر عریض

بولے تو اچھا , برا محسوس ہو
اسکی خاموشی سے کیا محسوس ہو
اس طرح دیوار پر تصویر رکھ
آدمی بیٹھا ہوا محسوس ہو
دام منہ مانگے ملیں گے اور نقد
قتل لیکن حادثہ محسوس ہو
رکھ لیا اخبار پیسوں کی جگہ
تاکہ بٹوا کچھ بھرا محسوس ہو
دیکھنا چا ہوں اسے تو ہر کوئی
میری جانب دیکھتا محسوس ہو
پاس جانے پر کھلے پیاسے پہ ریت
دور سے پانی کھڑا محسوس ہو

Check Also

گزری اور آنے والی بہاروں کے نام ۔۔۔ نوشین کمبرانڑیں

ہزاروں گنج ہیں جن پر تیرے پیروں کے بوسے ہیں تہہِ خاکِ وطن تو ہے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *