Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » 2020 » January (page 2)

Monthly Archives: January 2020

گوہر گھر ۔۔۔ تمثیل حفصہ

تاروں نے کیسا رات کا جنگل جِلا دیا منظر بدل بدل کے مِرا دن بنا دیا   میں جس کی آنکھ سے یہ جہاں دیکھتی رہی جنت کے پاس اْس نے مِرا گھر سجا دیا   احساس ہے بہت تْو مِرے پاس ہے بہت اس سلسلے نے مْجھ کو مجھی سے مِلا دیا   پتھر کو پوجتی رہی، مٹی کو، ...

Read More »

مست توکلی ۔۔۔ اویس اسدی

کبھی سمّو کی خواب آلود آنکھوں سے گری تھی جو تجلی تیرے سینے پر اگر وہ طور پر گرتی تو جل کر راکھ ہوجاتا   وہ کیسا حسن آفاقی تھا جس تمثیل کی خاطر نجانے کیسے کیسے حسنِ فطرت کے فسوں انگریز نقشے کھینچتا تھا تُو تری رمز آشنا آنکھوں نے کیسا خواب دیکھا تھا نہ تھی جس کی کوئی ...

Read More »

اسامہ امیر

محضر شوقِ محبت پڑھا کل رات گئے ذہنِ بیکار سے سب کشف و کرامات گئے کسی انگارے سے خس اور کرشمات اس کے اس کو چھو لینے کی خواہش میں مرے ہاتھ گئے اور کچھ دیر مجھے اس کا تبسم تھا نصیب اور کچھ دیر جو ہم باغِ طلسمات گئے ہر طرف لوگ تھے اور لوگ ہمیں دیکھتے تھے ہم ...

Read More »

نذیر حجازی

میں تو بچپن سے اب تک ایسا ہوں عشق کرتا ہوں شعر کہتا ہوں میری باتیں اگرچہ کڑوی ہیں میں مزاجاً بہت ہی میٹھا ہوں مجھ کو دنیا کی کیا ضرورت ہے میں فقیروں کے پاس رہتا ہوں تم تو گاوں کا میٹھا دریا ہو میں تو مٹی کا پیاسا کوزہ ہوں

Read More »

یاسین ضمیر

میں تری راہ میں خلل شاید تو میرے مسلے کا حل شاید رات اٹکی ہوئی ہے آنکھوں میں چاند میں پڑ گیا ہے بل شاید زندگی کو کرید کر دیکھو مل ہی جائے خوشی کا پل شاید پتھروں کا مزاج برہم  ہے شاخ پر پک چکا ہے پھل شاید مسلہ دل کو”کم” کا ہے درپیش جس کا کوئی نہیں ہے ...

Read More »

اسامہ امیر

شبِ شکست تماشائے رنگ و بْو بھی نہ تھا اور اس پہ دادِ ستم یہ کہ یار تْو بھی نہ تھا اجل نہ تھی وہ کوئی خوف تھا مْسلسل خوف لبِ سکوت کوئی حرفِ آرزو بھی نہ تھا مجھ ایسے خانماں برباد آدمی کے لئے نہ تھا پیالہ ء مے، نغمہ ء سْبو بھی نہ تھا کوئی تو بات بہ ...

Read More »

فرزانہ رفیق

بلوچی براہوئی زبان ئے ننا بلوچستان سرزمین شان ئے ننا   مہر و محبت کُھل تون کینہ مہر کننگ ایمان ئے ننا   گواڑخ نا پُھلاک مش تے ٹی مریر پُھلاتے خننگ ارمان ئے ننا   مہر تو بخشین مہر فرزانہ ارے مہران پُھرگدانے ننا

Read More »

مست توکلی

۔(بارش)ایک مختصر ساعت کے لیے لورالائی ؔ کی پشت پہ ٹھہر جاتی ہے   شمس ؔ’کے روضے پر، اور ”فقیرؔ دُھبہ“پر جھنکار کرتی ہے شبینہ بجلیاں سلگتی ہیں، رخ کرتی ہیں کم آب علاقوں کی طرف وہ آدھی رات کو اپنی آمد کی خوشخبری والی مشعلیں جلاتی ہیں ترخانؔ پہ برستی ہیں، پیاسے پہاڑی دنبوں کو پانی پلاتی ہیں ”مانڑ ...

Read More »

اَمْل ۔۔۔ جوانسال

مناں یادیں خداوند قدرتانی محمدؐ ضامنیں نیکوبَذانی اْمیداوراں مَں بی تَھئی اِسانی مناں قربان اَمْل ئے َ کَھنَدغانی مَتاہیں مانٹرکی پَہرے وَرانی اَمْل سرتاج و سونہیں اَمسرانی میانی گْوہرے لیمو برانی تہار ماہا  سرا کھَن مائے خانی منے چھو شاذِہی دیدار کَھنانی دلَوں آبادءَ کھَں دوست کھَندغانی گل ئے  دْرّیں دفے مْروھاذرانی چراغی روخیں نی دِیم تھنگوانی رَڑیں تھَا فریشتہ ...

Read More »

رخشندہ نوید

جانے کس طرف اب یار لوگ رہتے ہیں سمندروں کے کہیں پار لوگ رہتے ہیں یہ اتنا شور یہاں کا تو ہو نہیں سکتا وگرنہ گھر میں تو دو چار لوگ رہتے ہیں سمندروں سے بھی شفاف آسماں سے عمیق یہاں پہ لوگ بہت وضعدار رہتے ہیں ہوا اڑا کے مجھے لے بھی چل اسی جانب اُدھر جہاں مرے دلدار ...

Read More »