Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » 2019 (page 2)

Yearly Archives: 2019

جُست بکن ۔۔۔ اکبر بارکزئی

تو کہ سَر زُرتہ وتی دست ئے دلا  جُست بکن!۔ تو وتی سینگ ئے پُر مہریں گُلا جُست بِکن!۔ تو وتا جُست بِکن!۔ تو مناجُست بِکن!۔ ہر کساجُست بِکن!۔ جُست بِکن!۔ جُست بِکن!۔ تو وتی کوہ وگَراں جُست بِکن!۔ کوچگ و مچگدگاں جُست بِکن!۔ کور و گیابان و ڈلاں جُست بِکن!۔ تو وتی گزو چِشاں جُست بِکن!۔ گوار و براتان ...

Read More »

دریچے ہیں ۔۔۔ سلیم شہزاد

ہم اکثر چُپ ہی رہتے ہیں کوئی دستک ملے  تو  بولتے ہیں ہمیشہ راہ تکتے ہیں مسلسل منتظر رہتے ہیں   کھڑے رہ کر ہی بوڑھے ہوگئے ہیں   یہ پتھر جب بھی بولیں گے تو ان سے پوچھ لینا وہ آہیں جو فلک کو چیر دیتی ہیں ہم اُن کو  روز  سنتے ہیں چٹختے ہیں مگر شکوہ نہیں کرتے ...

Read More »

صادق مری

سر ظاہری برشکندغی چے سنگتی چے دژمنی سینگھار غی بے دروشمی روپہ رواں رہلا نغی اے من کئے اں چے زندغی جندانت کہ وث پجھار غی بار ہر کس ایں ڈکاں وثی روش گوستغیں گیر ارغی دَور کوڑوئے کَسّی نوی

Read More »

ماردو ۔۔۔  محمد خان کھوسہ

اس کو مار دو ہر زندہ احساس کو مار دو جو نہ چلے تری ڈگر پہ اس انسان کو مار دو مردوں کے درمیان جوہیں صاحب احساس ان سب کو مار دو ہے تجھے ابھی اور مشق کی ضرورت پھرتے ہیں جو بے ضرر لوگ ان کو مار دو کیوں رہے ضمیر، احساس، انسانیت اب ہے ان کی باری ان ...

Read More »

روشنی ۔۔۔ مبشر مہدی

جھانکتا اِک دریچوں سے آہنگ ِ نواِک صداروشنی مست آنکھیں بہکتی چہکتی ہوئی بے پنہ روشنی تیرے ہاتھوں پہ پھیلی ہوئی سرخ رویہ حِنا روشنی تیرے چہرے پہ چھیلا ہوا مرمر یں غازہ ساروشنی بے نوااِک فقیر زرالت نشاں مانگتا روشنی دشنوکی اگنی، اندرا کار تھ، تو کرِ شنا کی بنسی حسیں مُستجاب دُعا، عکسِ بیمِ ور جا میری روشن ...

Read More »

پہاڑوں کے نام ایک نظم ۔۔۔ قمر ساجد

(شاہ محمد مری کی ایک کتاب پڑھ کر)   روایت ہے پہاڑوں نے کبھی ہجرت نہیں کی یہ بارش برف طوفاں سے نہیں ڈرتے یہ خیمے چھوڑ کر اپنے نہیں جاتے کبھی  نامہرباں افلاک پانی بند کردیں تو نہ بارش کے خدا کا بت بناکر پوجتے ہیں اور نہ سبزہ زار میدانوں کو کوئی بھینٹ دیتے ہیں۔ یہ دشتی پیاس ...

Read More »

قطبی ستارہ ۔۔۔ موسی عصمتی/احمد شہریار

اگر کسی دن آگ لائی جائے اور میری ٹوٹی ہوئی لالٹینیں دوبارہ روشن کردی جائیں میں تب تک دیکھوں گا جب تک آسمان بے رنگ نہیں ہوجاتا جب تک پہاڑوں کی برف شرمندگی سے پانی پانی نہیں ہوجاتی جب تک تم دریا خط استوا کے قریب منجمد نہیں ہوجاتے میں تب تک دیکھوں گا جب تک مجھے بند آنکھوں سے ...

Read More »

پْٹ منی بیہوبورئے ڈولنت ۔۔۔  زوراخ بزدار

دل منی سوزیں بڈنڑے دانی بْت پہ بالاذا نہیل بیثہ دل دنی بازیں اٹکلاں زانی روح چو برین آسکئے ڈولیں ڈوبرئے نیاما َ تھاں رنگا مانی جزغا لوٹی مست ہم گاما جوسراں دیثیں سملئے بانہی درژبر و میوہ شام بیہو اے ساڑتتیں سوما آف برانی. ما کثیں دیوانے مریذحانا اشکثیں شئیرے عہذ قولانی سملئے بیلی نشتغا بثیں جی کثیں ملخاں ...

Read More »

گورکھ کے کجرارے نین ۔۔۔ شبنم گل

گورکھ کے وسیع مکھ پر سرمئی پہاڑ اس کے کجرارے نین ہیں ان آنکھوں میں فطرت کے حسن کے خواب پنپتے ہیں۔ ہریالی ان خوابوں کی تکمیل ہے۔ بادل اس کے چہرے پر بکھرے کالے بال ہیں۔ بارش کے قطرے پرکشش لبوں کی مانند گورکھ کے تن کو چھوتے ہیں تو ہر جانب پھول بکھر جاتے ہیں۔   (جوہی، دادو، ...

Read More »

وائی ۔۔۔۔۔ شبنم گل

لہروں کے ادھورے پن میں چھپا ہے کیا پانی کے اوپر تلے چاندنی کہتی ہے کیا سادھ بیلے کے سکوت میں ایک ان سنی بات کا تذکرہ ہے ایک ان کہی کہانی کہتی ہے کیا سادھ بیلے کے سکوت میں یہاں آکر ٹھہر اپنے مقابل خودتو اس گہرائی سے سندھو کی لہر کہتی ہے کیا سادھ بیلے کے سکوت میں ...

Read More »