Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » 2018 » July

Monthly Archives: July 2018

یہ تو پرانی ریت ہے ساتھی! ۔۔۔ گل خان نصیر

جتنے ہادی رہبر آئے انسانوں نے خوب ستائے کَس کے شکنجہ آرا کھینچا ہڈّی، پسلی، گودا بھینچا آگ میں ڈالا، دیس نکالا جس نے خدا کا نام اچھالا پتھر کھائے، سولی پائی جس نے سیدھی راہ بتائی شاعر و مجنوں ان کو بولے جن کی زباں نے موتی رولے روڑے مارے، خون بہایا ساحر کہہ کر ان کو ستایا ہم ...

Read More »

Lenin —  Gul Khan Nasir

Tr. Shah Koh Mengal Lenin, the brave tactician A portrait of love, valour and truth The eternal flame of knowledge and wisdom An epitome of toil and perseverance The leader of wretched masses The sword, striking at oppression’s roots A voice to the worker’s silent heart A shoulder to the peasant’s cause The smasher of the idols of gold A ...

Read More »

غزل  ۔۔۔ آسناتھ کنولؔ 

واقعہ تھا تو حادثہ بھی تھا دل کہیں پر کبھی جھکا بھی تھا مدتوں بعد یاد آیا ہے اُس سے نسبت تھی سلسلہ بھی تھا آس کی رہ گزار پر چُپ چاپ آرزو کا کوئی دیا بھی تھا ایک حسرت رہی فنا کے ساتھ ایک ماہوم سا گلہ بھی تھا تو نے گھبرا کے ساتھ چھوڑ دیا میں ترا درد ...

Read More »

غزل  ۔۔۔ عبداللہ شوہاز ؔ 

تئی واہشت ئے انگاراں درئیں پیلشتگاں مارشت دل ئے ہر دوئیں چمّ کوراں ، درامد بیتگاں مارشت گدارے ہم نہ جنت سنچے منا جنّتیں امبروز ئے وتا چہ سستگاں من وت منا چہ سستگاں مارشت اے ارواہ گوں تئی زلفاں ہمے امیت آ پیڑاتگ تو وہدے شنگ ئے ملگوراں دمانے پدّرہاں مارشت تئی شہر ئے ہمک وشبو منی وابانی مانا ...

Read More »

تھکن ۔۔۔ نیلم احمد بشیر

کتنی تھکن ہے ، کیسی تھکن ہے عجب تھکن ہے،غضب تھکن ہے کیا یہ میری روح کی تھکن ہے یا پھر میرے چُوربدن کی انتظار کی بھی ویسے ہوسکتی ہے اور امید بھی ہوسکتی ہے شاید ملن سمے کی تھکن ہے پروہ ملنا ملناکب تھا آخر ہم نے ملنا کب ہے جگراتوں کا رین بسیرا آنکھ میں کھبتی ٹوٹی کر ...

Read More »

مترجم منو بھائی

نزار قبانی کی نظم “ان کی کیا قدر جن کی زبانیں بند ہیں” کا آخری بند ۔ بحرِ اوقیانوس سے بحیرہ عرب اور خلیج تک پھیلے ہوئے بچو!۔ تم گندم کی بالیوں کی طرح ہماری امید ہو تم ہی وہ نسل ہو جو زنجیریں توڑے گی جو ہمارے سروں کی افیون تلف کرے گی جو ہماری خوش فہمیوں، اندیشوں اور ...

Read More »

غزل ۔۔۔ مندوست بگٹی

سماء دڑتہ، ڈغار تپتہ، دلا دھشت طاری ایں قیامت خیزیں منظر، ھنگرانی ہؤر و ھاری ایں خدایا چھے لقا بیثہ ، اِلے چھے پیشغ شزا مِلثہ زوانا نفسی نفسی ایں،وجودا بے قراری ایں گدرولاں پہ اُرہ تاخت انت، ہماں شہرے گُنا ہانی سغر من نیز غاں گون انت، بُت بینگاں دھواری ایں اے بے گورو کفنیں لاش شہ بر رستراں ...

Read More »

غزل ۔۔۔ مندوست بگٹی

زیندغی آ نیا ختغ ئے تہ جُواں کُھذئے بیاو مرشی، مئیں جنازہ یاتہ گند مئیں دف و چم ہردوئین انت بستئی آ نی تھرا میار نزی انت۔ بیاو نند زیندغیں دڑد سینغ آ وھاوبیثغ انت کہنغ ے گند مئیں دوئیں پھاذاں تہ بند بستغ ایں رک مھر سوالی نی نونت فیصلہ بیثہ ختم ، ہر راہیں بند لاش لا وارث ...

Read More »

متواری بلم ۔۔۔ عرفان شہود

ابر پارے ندی کی رواں راگنی سے بہلتے نہیں وہ کِناروں پہ اشجار کی موج مہمیز کرتے ہوئے آبجو میں نئے رنگ کی دھار پیدا کریں جھلملاتے فلک پہ فقط ایک مہتاب ہے نیم شب میں ستاروں کی ٹولی چمکتے ہوئے چاندنی کے دریچے ہویدا کریں شاہراہوں پر جلتے ہیں فانوس بھی روشنی کے لیے جگنوؤں کا مگر قافلہ جگمگاتا ...

Read More »

خواب میں گم ۔۔۔ نیلم احمد بشیر

مرزا حسام الدین صاحب کے گھرانے کے طور طریقوں سے دوست احباب ، رشتہ دار سبھی مرعوب تھے ۔ کیا رکھ رکھاؤ، کیا تہذیب ، کیا اصول پرستی تھی ان کی زندگی میں۔ کیا قاعدہ قرینہ تھا ان کے رہن سہن میں۔ خوش قسمت آدمی تھے ۔ اچھی بیوی ، فرمانبردار بچے ، مناسب آمدن، خوبصورت گھر اور کیا چاہیے ...

Read More »