Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » 2017 » December (page 3)

Monthly Archives: December 2017

پوسٹل کوڈ 87300 ۔۔۔۔ تمثیل حفصہ

سنو!۔ مجھے کوئی تار بھیجو خیال بھیجو سوال بھیجو تمھاری پوروں سے بڑھتی حدت قلم کی سیاہی میں ڈوب جائے میری خموشی کو جان دے دے میں جب تمہارا وہ تار دیکھوں تو یہ کہوں گی۔۔۔ تمھاری باتیں میں سن رہی ہوں تمھارے لفظوں کو گن رہی ہوں سنو! کہانی جو بن رہی ہے گھڑی سے آگے میں بڑھ رہی ...

Read More »

آئی ڈی کارڈ ۔۔۔ محمود درویش /کے بی فراق

کم شون نبشتہ بہ کن من یک عرب ے آں او منی آئی ڈی کارڈ نمبر پنجاہ ہزار اِنت منی ہشت زھگ اَنت او نہمی آئیوکیں گرماگاودی بیت زانا شما نا رضا بئیت؟ کم شون نبشتہ بہ کن من یک عرب ے آں او سنگ ئے کار جاہاگوں دگہ ہم کاریں سنگتاں نپرے آں منی ہشت زھگ اَنت من پر ...

Read More »

انقلابی کے نام ۔۔۔ آمنہ ابڑو

تم ایک عمر سے لڑ رہے ہو۔۔۔ مرجھائے پھیکے اور اداس وجودوں کے لئے سْرخ صبح کے دمکتے پھول کھلانے کی خاطر اک جنگ۔۔ اور میں اس لڑائی میں تمہارے ساتھ رہنا چاہتی ہوں میرے محبوب کیا میں تمہارے قدموں میں اپنی عقیدتوں کے دئے جلاؤں؟ اور پیار کے کچھ گیت تمہیں ارپن کر دوں؟

Read More »

اگلی ہجرت سے پہلے ۔۔۔ انجیل صحیفہ

ہجرتیں زمینوں پر ہوتی ہیں اور گھر روحوں میں بن جاتے ہیں مٹی سے پہلی ہجرت آنکھوں میں تو خشک ہوجاتی ہے لیکن دل میں ہمیشہ برستی ہے ریل کا ڈبہ پہلا گھر تھا شاید، ہر بار نئے مکان میں جا کہ اسیگھربنانے میں محنت نہیں محبت خرچ ہوتی ہے!۔ جن سے ریل کا ڈبہ نہ چھوٹتا ہو ان سے ...

Read More »

نعت (غیر مطبوعہ) ۔۔۔ دانیال طریر

امینِ عرشِ انجم ہا سرائے کذب و ظلمت پر ظہورِ زینۂ صادق خیالِ خامِ خامہ ہے کہ خوابِ خوابِ خوابیدہ‘ رخ آئینۂ صادق امینِ عرشِ انجم ہا یہ ماہِ ماہِ شب شایاں یہ آبِ آبِ نم دیداں یہ حرفِ حرفِ سیپارہ یہ ہیں اعرابِ ضو افشاں لب گنجینۂ صادق امینِ عرشِ انجم ہا گدائے بوسۂ گلگوں جبینِ کج خطوط آرا ...

Read More »

غزل ۔۔۔ بلال اسود 

جھگڑا وگڑا کچھ نہیں بس خاموشی ہے اور اس خاموشی کے پس خاموشی ہے آنکھوں سے زیادہ ہونٹوں سے بات کرو پیار کھلا اعلان، ہوس خاموشی ہے جیل سے چھوٹ کے آتے ہیں سب لفظ مرے سب نظموں کا ایک قفس خاموشی ہے چیخ ہے تیری آس میں اب تک سوئی ہوئی جا کر اْس آواز کو ڈس خاموشی ہے ...

Read More »

گیت ۔۔۔ ڈاکٹر منیر رئیسانی

( بلوچی دھن پر لکھا گیا) یاد میں تیری مَیں رہوں گریاں ہے میرا چہرہ کرب کا عنواں آشنا چہرے، آشنا گلیاں یوں تکیں مجھ کو جیسے ہوں انجاں تو ہے پاس میرے، میں ہوں دور تجھ سے عمر کا اندھیرا، شہرِ نور تجھ سے ہجر ہے تیرا وصل کا ساماں میری اک اک رگ میں ہے ترا بسیرا فرق ...

Read More »

اَمن صرف قبروں میں ہے

شاعر: آدرش ترجمہ: شفقت سومرو ہر شہر کے پو ل سے بلب اترے ہوئے ہیں بم ٹنگے ہوئے ہیں خوف کے راکاس نے بچوں سے بچپنا چھین لیا ہے عوتوں اور مَردوں کے خوابوں کو لپیٹ کر توپ کی نالی میں ٹھوس دیا گیا ہے گلی میں سے گزرتا ہوا آدمی اِدھر اُدھر دیکھ رہا ہے اور سوچ رہا ہے ...

Read More »

جانکنی ۔۔۔ ثبینہ رفعت

سکھیاں ساری مجھ کو تنہا چھوڑ گئی ہیں تارے گیت ہوائیں سارے اور سفر پر نکل گئے آج کی شب تنہائی پھر جسم وجاں پروار کرے گی آج کی رات پسینہ پھر لہو کی بوندیں ہوجائے گا آج کی رات زیتون کے باغ میں دل پھر ٹکڑے ہوجائے گا آج کی رات بہت بھاری ہے آج کی رات تم میرے ...

Read More »

وحشت کی موت ۔۔۔ اسامہ امیر

تم جس وقت میرے پاس نہیں تھی مرے سرہانے سوکھے ہوئے گلاب تمھارے بدن کی خوشبو سے مہک رہے تھے مجھ پر اک عجیب سی وحشت طاری ہورہی تھی اور اس وحشت کا دورانیہ اس قدر مختصر تھا نہ تو میں اس خوشبو سے مَس ہوا نہ ہی وحشت سے دو چار رات ڈھل رہی ہے صبح کے آثار نمودار ...

Read More »