Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » 2017 » December

Monthly Archives: December 2017

آج کا دن کیسا دن تھا!؟ ۔۔۔ نور محمد شیخ

نور، آج تم نے، کچھ لکھا نہیں کچھ پڑھا نہیں کسی مہمان کی خاطر نہیں کی کسی دوست کو فون نہیں کیا کسی سے ادب کا ذکر نہیں کیا فیض صاحب، عبداللہ جان جمالدینی ڈاکٹر حساّن ، لالہ لال بخش رند انوار احسن صدیقی، مظہر یوسف اور دوسرے، اِن گنت دنیا کو خیر باد کہنے والے یا، ابھی دنیا میں ...

Read More »

اُمید کی شہزادی  ۔۔۔ فاطمہ حسن

صدیوں سے ساکت کھڑی تُو کس کے انتظار میں ہے اس طرح اُٹھائے پُر وقار تیرایہ انداز جبر ہے یا اختیار تجھ سے ملاقات کی خواہش مجھے اس دشت میں لے آئی تُو جسے قدرت نے تراشا ہے تیرے قدموں میں گوادر کے ساحل پر میری تہذیب بستی ہے شاعری ، موسیقی ، کتابیں اُمید کی شہزادی تیرے گہنے ہیں ...

Read More »

حضرت شاہ عبدالطیف بھٹائی ؒ  ۔

بیت کا تَرجمہ بیِجل ، رائے ڈیاچ سے کہتا ہے: اے راجا!۔ پردیس سے سعی کرتا تُجھ تک پہنچا ہوں تیرا مقام عرش پر ہے میں انجان دھرتی پر ہوں تو کیسے میرا سوال پورا کرے گا میں اپنے گیت کے بدلے تیرا سَر مانگتا ہوں

Read More »

وسائل ۔۔۔ نوشین کمبرانڑیں

سْکھ کے موسم کی نظموں سے، لفظوں کے مْردوں کی بْو پھیلتی جارہی ہے یہاں جبکہ سازِ بقا کی صداؤں میں محرومیوں، بے بسیوں کی آہیں گْھٹی جاتی ہیں آپ اپنے جگر نوچ ڈالے ہیں عْشّاق نے پر بھلائی کے وقتوں کی تصویر روشن نہیں بِحر و بَر کے خزانوں سے ہٹ کر، بقا کی تمنا کے مارے ہوؤں کے ...

Read More »

عشرہ / میں چاہتا ہوں ۔۔۔ صدیق شاہد

میں چاہتا ہوں اس کے ساتھ چلنا ان راستوں پر جہاں دکھائی پڑیں کشادہ کچھاروں سے نکلتے چوکنا شیر میمنوں کو دبوچ لینے کو تیار بھیڑیے فاختاوں کے گھونسلوں پہ جھپٹی چیلیں بطخوں کے انڈوں کی بو پہ لپکتے سانپ میں چاہتا ہوں اس کے ساتھ چلنا بے خوف و خطر، سہمے ہوئے راستوں پر آئس کریم پیتے، قہقہے اچھالتے ...

Read More »

دانیال کے لیے ۔۔۔ ڈاکٹر عطااللہ بزنجو

میرے دوست میرے ساتھی میرے ہمدم میرے سنگت تم نظروں سے اوجھل ہو ؟ اب نہیں آؤگے کیا؟ مگر یہیں زماں و مکاں میں اور ان حدوں کے پار بھی تمھارے لفظ گونجتے ہیں۔۔۔ ان پہاڑوں میں، ہواوں کی مانند۔۔ پر۔۔۔ سچ کی طرح سچے۔۔۔ لہروں کی مانند۔۔ پر سمندر کی طرح گہرے۔ گردش سفر میں اور اس سفر در ...

Read More »

ناقابلِ اشاعت ۔۔۔ محسن شکیل

میری یہ نظم شائع نہیں ہوسکتی یہ اشاعت کے قابل نہیں اس میں شامل ہے گہرا دکھ ہم سب کا مشترکہ دکھ جسے محسوس کیا جاسکتا ہے بیان نہیں احتجاج اور مذمت اِس کے لفظوں میں نعرہ زن آنسو اور آہیں اِس کا دریا سطح پہ بہہ جاتی ہے سسکی لیکن میں یہ نظم دیوار پر کیسے لکھوں کہ ہر ...

Read More »

غزل ۔۔۔ وصاف باسط

سفر کا شور تھمے، رک کے اک نظر دیکھوں میں منظروں میں کبھی دھند اور شجر دیکھوں خدا کرے کہ مجھے لفظ تیرے مل جائیں میں ان کو جھیل کے صفحوں پہ درج کر دیکھوں تمہارے ساتھ کسی اور راستے پہ چلوں ہوا کے پار کہیں آسماں کا گھر دیکھوں مجھے پکارے، تْو چیخے، صدائیں دیتا رہے میں دور ہی ...

Read More »

زندگ بات بلوچستان ۔۔۔ نور محمد نورل

لوٹ ہمش انت سھت و دمان زندگ بات بلوچستان کوچگ کوہ و ڈن و ڈگار وائے وتن مئے ھشکیں دار ندر نت پر تو مئے دل و جان زندگ بات بلوچستان نیلیں زر تئی برات منی ڈیھ و ڈگار نت مات منی ستک یکیم و مئے ایمان زندگ بات بلوچستان تو مئے واھگ و ارمانئے دردیں دلانی درمانئے تو مئے ...

Read More »