Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » 2017 » April (page 3)

Monthly Archives: April 2017

نظم ۔۔۔ سعدیہ بلوچ

دلوں میں جنمی محبت جس کو سینے کے لیے سانسوں کی گرمی دی تھی جس کے حلق میں چونچیں بھر بھر کہ ارمان ٹھونسے تھے اس کے پرنکل آئے ہیں اب یہ نہیں ٹکے گی آؤ دل بڑا کرکے اسے گھونسلے سے آزاد کردیں

Read More »

موت کے کنویں میں موٹر سائیکل چلانے والی ۔۔۔ شبنم شکیل

اس تماشا گاہ کے خوف کے حاصار میں دیکھنا بھی جرم تھا چیخنا بھی جرم تھا سوچنا بھی جرم تھا چھپ کے ناظرین سے چھپ کے سامعین سے چھپ کے آسمان سے چھپ کے اس زمین سے دیکھتی بھی تھی مگر چیختی بھی تھی مگر سوچتی بھی تھی مگر وہ کہ جس کی زندگی گول گول گھومتے دائروں میں کٹ ...

Read More »

سویا ہوا خزانہ ۔۔۔ مجید سعد آبادی/ احمد شہریار

آدھی رات کو تمہارے چہرے سے کمبل ہٹانا سونے کے کوزے سے مٹی کی آخری پرتیں ہٹانے جیسا ہے میں ہر رات امیر ہوجاتا ہوں اتنا امیر کہ سڑک کے کنارے کھڑے اس مشکوک بوڑھے سے ہواؤں کا ایک مجموعہ خریدتا اور اس سے تمہارے خوابوں میں آندھی چلاتا ہوں تم ڈر کے مارے ماضی میں لوٹ رہی تھی اور ...

Read More »

سمجھوتہ ۔۔۔ نسیم سید

سمجھوتے کے دالانوں کی ہر چیز سجل سی ہوتی ہے ہر طاق سجا سا لگتا ہے اک فرض مسلسل کی دھن پر وہ پیر تھرکتے رہتے ہیں ہاتھوں کی لکیروں میں لکھے ’’دو بول‘‘ کھنکتے رہتے ہیں ہمت کی چٹختی شاخوں سے کچے دن توڑے جاتے ہیں اور پال لگائی جاتی ہے راتوں کے بان کے بستر پر تہذیب کے ...

Read More »

کچھ نہیں ہے کہیں  ۔۔۔ ابرار احمد

نہیں ، کچھ نہیں ہے کہیں کوئی میں ہوں نہ تو اب نہ آزار ہے ، آرزو بھی نہیں خاک امروز سے شہر نو روز تک بس دھواں ہے دھواں جس میں آنکھیں سلگتی ہیں ، تکتی نہیں دھول اڑتی ہے ہر سو یہاں سے وہاں تک … مگر ۔۔ کوئی بارش سی تھی ان دلوں میں کبھی کوئی مہکار ...

Read More »

منتظر  ۔۔۔ احسان اصغر

کبھی بہتے پانی پہ تم نے بھڑکتی ہوئی آگ دیکھی ؟ کبھی تم نے سورج میں پڑتے ہوئے بے تحاشہ بھنور اپنی آنکھوں کے شفاف عریانیوں میں اتارے؟ تمہارے لیے اجنبیت ہے چاروں طرف پھیلتی دھند میں۔۔۔ہو گی !۔ لیکن مرے آئینے میں تو منظر کا منظر چمکتی ہوئی دھوپ ایسا نکھرتا ہوا ہے میں تجرید کے بیکرانے میں یوں ...

Read More »

غزل ۔۔۔ خمار میرزادہ

اتنی شدت تھی کچھ وعیدوں کی قبر کھولی گئی شہیدوں کی آستاں زاد آستاں تک ہیں یہ وراثت ہے زر خریدوں کی قفل ہاتھوں میں آ گئے سارے جب ضرورت پڑی کلیدوں کی کس بنا پر سوال کیجیے دل… دھجیاں اڑ چکیں رسیدوں کی شور اندر کا تھم سکے شاید چپ نہ ٹوٹے گی خود گزیدوں کی

Read More »

غزل ۔۔۔ مومن مزار

پتو ہرشپ مائیکان بوتاں من وت مْرتاں بلے بَلان بوتاں من تئی شوہازادرکپتاں وھدئے وتئی ڈس و نشان بوتاں من اَچ تئی دستا گْلیں مہگونگ چو پْلا گیمران بوتاں من ہورکیں ہاموشی درد نوارت پرچیاچو بے زبان بوتاں من وائے منی شومیں نصیبا تو آبادوویران بوتاں من پہ آجوئی ئے درپشوکیں منزلا ہمراہاں گوں جنزان بوتاں من بے نوا انت ...

Read More »

گاؤں میں ایک رات!۔۔۔ع۔ سلام۔(پٹ و پول:ڈاکٹر سلیم کرد)۔

بیکراں شب مہیب سناٹا ناچتے ہیں ڈراؤنے سائے دُور ۔ پربت کے دامنوں کے تلے کوئی بیٹھا ہے آگ سلگائے جیسے افسردہ خواب زاروں میں ایک موہوم حُسن اُبھر آئے ذہن دول کے سیہ خلاؤں میں مُسکرا مُسکرا کے چھپ جائے ایک بچہ بُخار میں مدہوش ’’ماں ۔ ماں‘‘ کہہ کے بُڑ بڑاتا ہے پاس کے جھونپڑے میں بُوڑھا کساں ...

Read More »

غزل ۔۔۔ عالم عجیب

محاذِ عشق پہ ضد اپنی ہار دیں صاحب یہ کچا خول انا کا اتار دیں صاحب یہ بار بار میں پھر کیوں یہاں وہاں دیکھوں ٹکیں بھی آپ مجھے بھی قراردیں صاحب ہے خوب آئینہ آگے کھلی ہوئی زلفیں مرے دنوں کے بھی گیسو سنواردیں صاحب کبھی کبھی تو مرے دل کی راہ پر بھی چلیں یہ خود سری بھی ...

Read More »