Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » 2017 » March (page 2)

Monthly Archives: March 2017

لبادے ۔۔۔ کاوش عباسی

سچ کو سچ ہونے نہیں دیتے ہیں اپنے لبادوں پہ جو ہم سچ پہ چڑھائے ہوئے ہیں فیصلے سب اپنے کئے جاتے ہیں خود کو، ہر رِشتے کو اِن کہنہ ، گرانبار لبادوں کی اِطاعت میں دئیے جاتے ہیں مارنا، کاٹنا ہاتھوں سے گلا گھونٹنا اِنسان کو، رِشتوں کو دبا کر رَکھنا یہ لبادے ہیں ہمارے کئی صدیوں سے ہم ...

Read More »

غزل  ۔۔۔ آفتاب حْسین

تیر اِس بار نشانے کی طرف سے آیا یعنی اِک زخم نہ آنے کی طرف سے آیا کارِ دْنیا نے اب اْلجھایا ہے ایسا کہ مجھے دھیان اپنا بھی زمانے کی طرف سے آیا ہر گْلِ تازہ میں خْوشبْوئے گْذشتہ پائی ہر نیا خواب ، پْرانے کی طرف سے آیا راستہ دیکھتے رہتے تھے کہ آئے گا کوئی اور جسے ...

Read More »

درد کی لکیروں سے گفتگو ۔۔۔ ثروت زہرا

وراثت شاہ کٹی پھٹی لاشوں کے ٹکڑے ڈھوتے ڈھوتے تمھاری انگلیوں کی لکیروں کے بیچ خوں کے کتنے خوابیدہ داغ دفن ہوچکے ہیں تمھارے ماتھے کی شکنوں کے بیچ درد کی ہزارہا لکیریں ہیں جو اپنے خط کھیچتے کھیچتے ہانپ رہی ہیں آنکھ کی پتلیوں میں دھرے منظروں کے ترازو میں کتنے بریدہ وزن تول چکے ہو ہاتھوں کی جنبشوں ...

Read More »

دیکھ سونا نہیں ۔۔۔ ذیشان حیدر نقوی

۔۔۔۔۔۔ دیکھ سونا نہیں ۔۔۔۔۔۔ آج کی رات کا آخری خواب ہے دیکھ لیں۔۔۔۔۔۔ جاگ لیں ۔۔۔۔۔۔ اس نے پھر دوسری بار ہونا نہیں دیکھ سونا نہیں دیکھ رونا نہیں وہ جو پریاں ۔۔۔۔۔۔ تری نیند کی بس میں تھیں ان کا گھرآ گیا ایک بادل کا سایہ اچانک تری آنکھ سے ہوکے سیدھا ادھر آگیا یار۔۔۔ شونا ۔۔۔۔۔۔ نہیں ...

Read More »

غزل ۔۔۔ شہزاد نیّر

عجب جہان میں تو نے مجھے اتارا تھا مری زمیں پہ کسی اور کا اِجارہ تھا مِٹی مِٹی سی ہتھیلی مری ہتھیلی تھی بجھا بجھا سا ستارہ مرا ستارہ تھا جگر کا خون جلانے میں رات کاٹی تھی شکم کی آگ بجھانے میں دن گذارا تھا رْتوں کے وار کلیجے نے بار بار سہے دنوں کا بوجھ بدن نے بہت ...

Read More »

غزل ۔۔۔ سید خورشید افروز

پر بلندی پہ اڑا ڈالے ہوا نے میرے کھولے ادراک کے درایک خطا نے میرے بے گناہوں کے لہو کا مجھے لینا ہے حساب تگ و دو میں ہیں عدو حوصلے ڈھانے میرے سخت حیران ہوں واپس پلٹ آئے ہیں کیوں؟ کچھ نشانے پہ لگے تو تھے نشانے میرے رات ہے، سپنے ہیں، سناّٹا ہے، تنہائی ہے اور یادوں کے ...

Read More »

غزل ۔۔۔ قندیل بدر

زمیں سے فلک تک خودی سے خدا تک سفر کر رہی ہوں خلا سے خلا تک جہاں میں کھڑی ہوں دھواں ہی دھواں ہے ہے کہرا ہی کہرا فضا سے قضا تک نہ میں ہوں، نہ تو ہے، فقط ھو ہی ھو ہے ہوا سے لکھی ہے کہانی ہوا تک وہ آیا ہے واپس وہی خواب لے کر ہتھیلی پہ ...

Read More »

لمئی آبولی ۔۔۔ افضل مرادؔ

اُست اٹ گڈولی ،لمئی آ بولی مہر نا جھولی لمئی آبولی اے اودے پاوہ ساہ انا بندُس ہیت ئے اصولی ، لمئی آبولی حقاکہ تینا رکھ کن تینا خواہک سولی، لمئی آبولی ای کیوہ داٹی اُستہ نا ہیتے شعراتا بولی ،لمئی آبولی آسرات کیک دُن اُست استخانے خل انا گولی، لمئی آبولی اونا توارٹ اُست جم مرینہ نن کن گڈولی ...

Read More »

لفظوں کے پیوند ۔۔۔ فاطمہ حسن

ہونٹ کے زاویوں میں بھٹکتے ہوئے تم نے کتنے کونے دیکھے بے معنی آہٹوں بے شناخت چہروں میں تم نے151 کیا کچھ ڈھونڈا؟ تم کہاں کہاں گئیں، انسانی عظمتوں کا جھوٹا لبادہ اوڑھ کر مگر اس پہ اپنے ہی لفظوں سے پیوند لگاتی رہیں حواس کے یہ شعبدے تمھارے سامنے ہیں تم نے زمینی کھیلوں کو دیکھا کہ شطرنج کی ...

Read More »

غزل ۔۔۔ بلال اسود

نیل آنکھوں کی چمک کیسے مجھے کھنچتی ہے یہ تیرے خواب تلک کیسے مجھے کھینچتی ہے گر تو دِکھ جائے تو مڑ مڑ کے تجھے دیکھتا ہوں تیری اک اور جَھلک کیسے مجھے کھینچتی ہے دوڑ پڑتا ہوں میں ہر بار سرابوں کی طرف یہ تمنّا کی دھنَک کیسے مجھے کھینچتی ہے پاک رخسار نے چکّھا نہ کبھی غم کا ...

Read More »