Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » 2017 (page 10)

Yearly Archives: 2017

غزل ۔۔۔۔۔  سبیلہ انعام صدیقی

رکھّے َ ہراک قدم پہ جو مشکل کی آگہی ملتی ہے اْس کو راہ سے منزل کی آگہی سیکھا ہے آدمی نے کئی تجربوں کے بعد ؂ؔ ؔ طوفان سے ہی ملتی ہے ساحل کی آگہی ّٓاْس کا خدا سے رابطہ ہی کچھ عجیب ہے دنیا کہاں سمجھتی ہے سائل کی آگہی نظروں کا اعتبار تو ہے پھر بھی میرا ...

Read More »

غزل  ۔۔۔ اسامہ امیر

سامنے آئینہ رکھا ہوا تھا بات کرنے کا حوصلہ ہوا تھا میں نے دریا سے گفت گو کی تھی اور میں رمز آشنا ہوا تھا اْس گھڑی زندگی ملی تھی مجھے جس گھڑی تجھ سے رابطہ ہوا تھا زندگی اک سرائے خانہ ہے کسی درویش سے سنا ہوا تھا منتظر تھا کسی پری کا وہ باغ میں پھول جو کھلا ...

Read More »

جاوید زہیر ؔ ۔ پیشکان

ندات ئے بھر منی شت ئے زندا پر منا شات نکت شت ئے زندا زندئے مراد آھِرا من دیستگ انت گوستگ انت وھد وتی باھندا ودار شد، او پارگ و بزّگی کتگ درد جبین ئے بند ، بندا ناں شہارت ئے تنگہ یے ناں چیزے دل سِریں ونتگ میستا نماز، تو پنچ رندا بیتگاں داں مدّتے کلا وتی دوزوا ہئے ...

Read More »

اے بالڑا کہڑا بالڑا اے! ۔۔۔ ابنِ انشا؍عابد میر،ریشم بلوچ

1 اے بالڑا کہڑا بالڑا اے اے کالا کالا جیڑھا اے کالا جیڑھا، مٹی ہالا جیڑھا اے بالڑا بُکھا بکھا جیڑھا اے بالڑا سُکا سُکا جیڑھا اے بالڑا کیہندا بالڑا اے اے بالڑا کہڑا بالڑا اے اے واری تے چَھڑا بیٹھا اے نہ ایندے پیٹ اچ مانی اے نہ ایندے تن تے کپڑا اے نہ ایندے سر تے ٹوپی اے ...

Read More »

شش شیئر ۔۔۔ شاعر: سیفو ۔۔۔ ٹرانسلیشن: منیر رئیسانی

دڑد دڑد پیہک عمر ٹی مدان مدانا قطرہ قطرہ چُٹسہ دم دما لفظاک لفظاک اریر بس دِم اس ولے دالفظاتے ای کہ پاوہ زوال اف تہ پین اسٹ کہ نے آمبار اَس نے ہرو تو بریک یاتا اسے ھنینا باز مہراٹ ہیت کروکا باززیبا خناٹ اودے اُو پھل بناکا بلبل نا قرار آ ،ہیت کننگ پڑو ارے بہار نا دُن ...

Read More »

غزل ۔۔۔ اسامہ امیر

پکارتا ہے مجھے، رائیگاں پکارتا ہے یہ کون ہے جو پسِ آسماں پکارتا ہے بہ وقتِ صبح سڑک کھینچتی ہے اپنے تئیں بہ وقتِ شام شکستہ مکاں پکارتا ہے اذان دیتا موذن بلاتا ہے مسجد مگر خدا مجھے بعد از اذاں پکارتا ہے میں جانا چاہوں تو، زنجیر کا بہانہ کیا؟ مگر وہ دوست مجھے نا گہاں پکارتا ہے مرے ...

Read More »

غزل ۔۔۔۔ فراز محمود

صدائے کن سے بھی پہلے کسی جہان میں تھے وجود میں نہ سہی ہم خدا کے دھیان میں تھے وہ کتنے خوش تھے جو کچھ بھی نہ جانتے تھے مگر جو جانتے تھے وہ ہر دم اک امتحان میں تھے کسی کو حق کی طلب تھی کوئی مجاز پہ تھا اور ایک ہم تھے کہ دونوں کے درمیان میں تھے ...

Read More »

تماش گاہ ۔۔۔ انجیل صحیفہ

زندگی سر کس اُن کے لیے ہوتی ہے جن کے پاس ناظرین ہوتے ہیں طاقچوں میں رکھیں تنہا امیدیں ہر وقت ٹمٹماتی دھڑکن کی طرح جل بجھ رہی ہیں جھلملاتی لَو کے سامعین ابھی جگمگاتی روشنی چکھنے میں مصروف ہیں ریگستانوں میں بھاگتے اونٹ اور دیوار کے اس طرف بندھے موت کے کنویں کے چکر کاٹ لیں تو کرتب دکھاتے ...

Read More »

غزل  ۔۔۔ اسامہ امیر

خواہ اچھے، برے بناتا ہوں سوچ کے زاویے بناتا ہوں شام ہونے سے پیشتر صاحب کینوس پر دیے بناتا ہوں میں تصور میں پھول شاخوں پر کچھ ہرے، کچھ بھرے بناتا ہوں یہ پرانے ہیں، پھیکے پڑ گئے ہیں ابر پارے نئے بناتا ہوں خود کو اک مسئلے میں الجھا کر اور کچھ مسئلے بناتا ہوں کل تو خود کو ...

Read More »

غزل ۔۔۔ نعمان صدیقی

جانے کیسی یہ راہ گزر میں ہے آدمی آج تک سفر میں ہے آج ہر ایک کی نظر میں ہے وہ تماشہ جو میرے گھر میں ہے اْڑ رہا تھا ہوا کے دوش پہ جو اب تو وہ دستِ کوزہ گر میں ہے خون اتنا بہا ہے گلیوں میں ایک وحشت سی بام و در میں ہے یہ قیامت سے ...

Read More »