Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » 2016 » September (page 2)

Monthly Archives: September 2016

جنھیں آسماں کھا گیا ۔۔۔ ثروت زہرا

ہر آہٹ پر یوں لگتا ہے وہ آیا ہے ہانڈی میں بھجیا تو کم ہے لیکن سورج کے گھٹنے بڑھنے کی ا س لک چھپ میں آنگن میں کس کاسایہ ہے آئینے میں کون اپنی چھب دکھلاتاہے چپکے چپکے کون آتاہے آنکھوں کے جلتے دیپک میں جلتی بجھتی کیا مایا ہے روح اورجسم کی ٹھنڈی مٹی چپ سے لیپی تیری ...

Read More »

کبھی کسی دشت کے کنارے ۔۔۔ حسن جمیل

کبھی کسی دشت کے کنارے پہ ہم ملیں گے میں تم کو گزرے ہوئے دنوں کی، کٹھن شبوں کی تمام باتیں سناؤں گا تم مجھے بتانا کہ شام کیسے گزارتی تھیں تمہاری صبحیں کس آئنے سے کلام کرتے ہوئے گزرتی زندگی کے تمام وہ دن جو ہم نے اک دوسرے کو دیکھے بغیر یہ سوچتے گزارے کبھی تو ہم تم ...

Read More »

پانی ۔۔۔ کرامت بخاری

پانی ایک روانی ہے پانی کی تحریر انوکھی پانی ایک کہانی ہے پانی ایک زمانہ ہے پانی کے پاتال میں جیسے اِک انمول خزانہ ہے پانی پُراسرار ندی دریا اور سمندراس کے ہیں آثار سُرخ اور نیلا کالا پیلا اِس کے رنگ ہزار جیون بھی اِک گہرا پانی جس کا روپ امر دُکھ سُکھ آئیں لہریں بن کر اور آگے ...

Read More »

غزل ۔۔۔ حماد نیازی

یہ کس جنوں کا شرارہ لہو میں ڈھل آیا بدن نے آہ بھری روح میں خلل آیا ہمارے گھر میں سبھی لوگ خواب دیکھتے تھے میں ایک خواب میں آیا تو بر محل آیا میں اپنے باپ کے سینے سے پھول چنتا تھا سو جب بھی سانس تھمی سیر کو نکل آیا تجھے خبر ہی نہیں بارگاہِ حسن مآب ترے ...

Read More »

غزل ۔۔۔ رحمان حفیظ

تہہِ کوہِ صدا آتش فشاں رکھا ہْوا ہے اک ایسا لفظ بھی زیرِ زباں رکھا ہْوا ہے تِری آنکھوں میں کیوں جھلکا نہیں رنگِ تمنّا؟ ترے سینے میں دِل کیا رائیگاں رکھا ہوا ہے !۔ کسی منظر میں بھی تادیر رک سکتا نہیں میں یہ چشمہ آنکھ کا پیہم رواں رکھا ہوا ہے تکبّر سے کمَر کْوزہ ہوئی ہے آسماں ...

Read More »

دستونک ۔۔۔ مسرور شاد

چوگانا سیر نکنت شپ وابانی کاروبار ئے چنڈیناں انگہ روچا من گوانزگا بہار ئے چشیں زند ہزار قربان دہکانا واہگانی یکے پہ صد بَرم دنت، وتی نیت و کشار ئے کوہے رُدیت دل کہ گرماگا گرندنت جمبر نَل جسکیں ماتکو ہاں دلبند ا ریگزار ئے گُل ئے باد گیر ئے قندیل منی بانداتئے بام انت عرض انت ھدا شہ ہؤ ...

Read More »

عشرہ ۔۔۔ محمد عامر

کھڑکی جیسا ہے ایک دروازہ جو بنا چابیوں کے کھلتا ہے آٹھ فٹ کا بڑا سا کمرہ ہے چھت سے فانوس ہے لٹکتا ہوا میلی دیواریں پینٹ اترتا ہوا کسی دیوار پر کلاک نہیں ایک الماری جس کا لاک نہیں کپ یہاں ایش ٹرے بنے ہوئے ہیں میز پر چار چھ کتابیں ہیں نیچے کچھ بوٹ اور جرابیں ہیں

Read More »

تماشا ۔۔۔ سانی سید

وشبو رنگیں مردم گرد انت بازارا اِشک وتی الہاما شئیر یے جوڑینیت مست ئے مستی، ہست ئے ہستی آ گند یت بے چاڑیں ارواہ ہشت چوکا ناچ کننت لہتیں پوٹو پریس کلباگمنام انت مھلب و چندن شیرینءِ یے محتاج انت ملّیرامئے کوہنیں گنوکی نوک کتہ یک کْوکاریے واتر بوْتہ کبراچہ یک واہشت یے انگہ گیٹا ٹْکان انت بیائے چْکاں کْلپی ...

Read More »

نظم ۔۔۔ حمید لغاری

گْل گِہیں گیمْرتغاں تفاخے چھوئیں کھفتِش سرا چِھترکئے آ پہ سٹ ثئیش داں موسمے، داں چیترے، ھیلے نہ کْث ئیش چے سرا فرشئے گہیں پیداوراں زیندا پچے موکل کثو رائی رووخیں مْڑدغاں گو ھمگام بیثو جْزغیں؟؟؟؟ ڈسیں شئے باغ ئے بانَہا چے پہ شار قْرباں نہ کْث وثی زندگی وثی بندگی وثی شام و صواحانی قرار شفانی و بامانی بہار ...

Read More »