Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » 2016 » July

Monthly Archives: July 2016

مسکراہٹ نظم لکھتی ہے  ۔۔۔ نسیم سید

کو ئی خوشبو۔۔۔ بہت چپکے سے مٹی میں مہک جا ئے کو ئی آواز آہستہ بہت آہستہ سو چوں میں ٹہر جا ئے کو ئی جملہ کلا ئی تھام کے اندر کہیں کونے میں بیٹھا دیر تک باتیں کئے جا ئے تو کا غذ کنکھیوں سے دیکھتا ہے مسکراتا ہے قلم لفظوں میں مہتا بی، شہا بی روشنی سے سبز ...

Read More »

مجرم ہیں تیرے ہم سبھی ۔۔۔ سجاد ظہیر سولنگی

پشاور میں قتل ہونے والے خواجہ سرا کے نام سارے مسیحا شہرکے یہ فیصلہ ناں کرسکے کیاتو خدا کی خلق تھی یا دیوتا کی دین تھا ؟ کیا جنس تھی تیری بھلا الجھے رہے اس بات میں ! اورڈھول ،گھنگرو ، پایلیں ہاں گیت، نغمے، زمزمے سب سسکیوں میں ڈھل گئے تھاماتمی نیلا گگن تارے سبھی تھے سوگ میں تھاچاند ...

Read More »

ابھی شھرِ جاناں کی کس کو خبر ھے ۔۔۔ مبشر مہدی

ابھی شہرِ جاناں کی کس کو خبر ہے یہ کیا موڑ ہے،رہ گزر کس طرف ہے ابھی منزِِلِ شب کی لمبی گھڑی ہے ’’شبِ دوستاں‘‘ کی اِسی تیر گی میں نجاتِ دل و جاں کے ارماں کی خاطر دیئے بھی جلیں اور تارے بھی ہر پہل حسابِ دل و جاں بہت ہے نصابِ محبت کا لمبا سفر ہے اس سچ ...

Read More »

غزل  ۔۔۔ افضل گوہر

رنگ بکھرے تھے اْس کے پانی میں اوک بھرنا پڑی نشانی میں دْکھ تو یہ ہے کہ ساری دْنیاہے میں نہیں ہوں مری کہانی میں خال و خد خوب رو تو ہیں لیکن قید ہیں خوفِ خاکِ فانی میں صرف دریا نہیں بہاؤ میں ایک منظر بھی ہے روانی میں اپنی افسردگی پہ ہنستا شخص رو بھی سکتا ہے شادمانی ...

Read More »

غزل  ۔۔۔ بلال اسود

لوگ جاتے ہیں جہاں سے وہ جہاں باقی ہے جب مکیں ہی نہ رہے ، کیسے مکاں باقی ہے یہ جو منظر ہیں دھواں،اور بھی دھند لائیں گے دھند باقی ہے ابھی اور دھواں باقی ہے ایک اک کر کے یہ دنیا ئیں فنا ہو جائیں گی مگر جب تلک آسماں باقی ہے سماں باقی ہے موت بازار میں نکلی ...

Read More »

زندگی ۔۔۔ شفیق شاد

زندگی سد رند ءَ اگاں بئیت اِنت زندگی نوکیں رنگے ءَ کئیت اِنت زندگی ہر رنگ ءَ بلئے روت اِنت زندگی الّم اُوں دوبَر کیت اِنت زندگی پیشی نوبتاں نئیت اِنت زندگی اے پیمیں گُڈا مئیت اِنت * زندگی رنج ءُُ وشّی ءِ نام اِنت زندگی ہر دم مَرگ ءِ پیگام اِنت زندگی اَنچو مَرچاں بے تام اِنت زندگی نگد ...

Read More »

غزل ۔۔۔ وصاف باسط

حبس ہے غم کی روانی قید ہے کس سمندر میں یہ پانی قید ہے خوف آتا ہے مجھے اس شخص سے جس کے ہاتھوں میں کہانی قید ہے اب کسی کو بھی نہیں ہے ڈر کوئی یہ کوئی صدیوں پرانی قید ہے اس طرف رستہ نہیں جاتا کوئی جس طرف اس کی نشانی قید ہے کیا ضرورت ہے یہاں زندان ...

Read More »

غزل ۔۔۔ ڈاکٹر وقار خان

زیادہ سوچنے والے تجھے پتہ نہیں ہے جو تجھ کو سینے لگاتا ہے وہ ترا نہیں ہے وہاں پہ ہم بھی ہیں موجود ڈھونڈنے والی سو تیرے دل میں اکیلا ترا خدا نہیں ہے تمہیں پتہ ہے کہ تم کس لیے ہوئے ہو ذلیل ؟ تمہارے پاس کوئی اپنا نظریہ نہیں ہے ہیں بد دماغ مرے سارے دوست میری طرح ...

Read More »

غزل ۔۔۔ شبیر نازش

کم ترے ضبط کی قیمت نہیں کرنے والے ہم تری آنکھ سے ہجرت نہیں کرنے والے اپنے نزدیک محبت ہے عبادت کی طرح ہم عبادت کی تجارت نہیں کرنے والے یہ الگ بات کہ اظہار نہیں کر سکتے یہ نہ سمجھو کہ محبت نہیں کرنے والے کاٹ کر پھینک دے سر،چاہے سجا نیزے پر ہم ترے ہاتھ پہ بیعت نہیں ...

Read More »

نظم ۔۔۔ شمامہ افق

“بہت کٹھن ہے” وفا کے رستوں سے خار چننا یا خواب بْننا۔۔ بہار موسم میں ذرد پتوں کی دوستی میں وجود کی کونپلیں کھرچنا۔۔۔ نئے زمانے کی جرسیوں میں پرانی سردی سے لڑتے رہنا جلن چھپانا , ہنسی دکھانا۔۔۔ بہت کٹھن ہے۔۔ بہت کٹھن ہے ہواؤں کی سازشیں سمجھنا۔۔ مگر انہی سے ہی چوٹ کھانا۔۔ پرائی آنکھوں میں اپنے خوابوں ...

Read More »