Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » 2016 » May (page 2)

Monthly Archives: May 2016

غزل ۔۔۔ رضوان فاخر

زہر سانسیں پی رہا ہے ہر گھڑی جانے کب ہو خاک پنہاں زندگی جل رہی ہے انگلیوں کے درمیاں مدتوں کی بے وجہ حیرانگی بے چراغ و نور ہے تخت_ رواں ہمسفر ہر گام ہے بیگانگی عکس اس کا تیرتا تھا آب پر اور زیرِ آب تھی دیوانگی فاخر اسکا پاس رکھنا ہے تمہیں یہ کٹورا برف بھی ہے آگ ...

Read More »

نظم ۔۔۔ انیتا یعقوب

زندگی آ تجھے سنواروں میں تو جو اک عمر سے اداسی میں شکوہ بیداد بن کے پھرتی تھی ایک افسردہ سی حیا بن کر آ تری زلفوں کو سنواروں اور تیرے ہر خواب کو کروں پورا زندگی آ تجھے سنواروں میں دیکھ لے ضبط آرزو سے اب دل کے آئینے سے لہو پھوٹا تیرا تن من نکھار کر رکھ دوں ...

Read More »

غزل ۔۔۔ ذوالفقار گاڈھی

سندھہ بلوچی ئے دروشم مئیں لوماں آتؤں دیر شے نا دیربی دلگیرشے یک روش دئے مہمان را زُرتئے نغان دئے شیر شے عاشق، ماں اللہ لوک ایں مائے چے بری کھسی میر شے تؤ جو کہ مئیں محبوبئے لوٹھاں ماں چے ترا پیر شے مئیں چم منی رونق تھرھا دیزھوں ترا جو دیر شے مئیں پاذ بستو ایرکتاں تو پُھٹ ...

Read More »

غریو ۔۔۔ محمد رفیق مغیری بھاگ

غریو ایزا بد حال استیں زند آنہی ءِ جنجال استیں لنگھڑیں لافا چُک مِرغاں یک روچ گُزغا سال استیں امیرا یزا عیشاں کھنغاں غریبو نصیو ا ما دال استیں غریو لا فا پہ چُکاں بہادا امیر گو کروڑیں مال استیں غریو ءِ جانا جر نیستاں اے ہمے نظام ءِ کمال استیں قحط مروچی غریوا پہ آتکا روز مِرغا آنہی مال ...

Read More »

غزل ۔۔۔ محمود ایاز

واہموں میں پل رہا تھا اور آگے چل رہا تھا کون سی خواہش کی خاطر ہاتھ اپنے مل رہا تھا پھول پر سایہ نہیں تھا دھوپ تھی اور جل رہا تھا ریت کی بارش میں کیسے ایک پاگل چل رہا تھا وقت بھی میرے مماثل خامشی میں ڈھل رہا تھا وجد میں مجذوب کیسے پانیوں پہ چل رہا تھا اپنی ...

Read More »

ہجرِ مسلسل ۔۔۔ مبشر مہدی

یہاں اک ہجرِ مسلسل کا پھر آغا ز ہوا چاہتا ہے اے یارو یہاں ٹوٹے ہوئے دل روز اک انگار جلاتے ہیں نیا ایک انگار تھا وہ بھی جو دِلوں کے اندر روشنی کے کئی پیکر ہی تراشے چلا جاتا تھا یونہی روشنی جس سے عیاں تھا کسی چہرے کا وہ رخ جس سے جذبوں کی حرارت مہک اٹھتی تھی ...

Read More »

غزل ۔۔۔ ساحر لدھیانوی

پونچھ کر اشک اپنی آنکھوں سے مسکراؤ تو کوئی بات بنے سر جھکانے سے کچھ نہیں ہوتا سراٹھاؤ تو کوئی بات بنے زندگی بھیک میں نہیں ملتی زندگی بڑھ کے چھینی جاتی ہے اپنا حق سنگ دل زمانے سے چھین پاؤ تو کوئی بات بنے نفرتوں کے جہان میں ہم کو پیار کی بستیاں بسانی ہیں دُور رہناکوئی کمال نہیں، ...

Read More »

ماکار خانہے ٹاہینوں ۔۔۔وپٹسا روف؍شان گل

ما کار خانہے ٹاہینوں باز مزائیں کارخانہے گوں کنکریٹ و آسنہ بِھتاں مڑدوزال ما عوام کار خانہے ٹاہینوں زیندھئے! مئے چُک مِرنت مں زہراں پُریں ڈھونڈہ بو آ شہرئے گُھٹ آروخیں گندھیں آبادیاں دنیا یک جیلے مڑدوزال، عوام یک گامے دِہ پذا نہ ! ما کارخانہے ٹاہینوں زیندھئے۔ مئے چک مرنت مں گٹو کنوخیں ڈھونڈہ بو آ گوں چماں کہ ...

Read More »

مزدور کو نصیحت ۔۔۔ بلوچی سے ترجمہ: شاہ محمد مری

گل خان نصیر کی بلوچی نظم شاہ و گدا‘ سیٹھ اور خوار مزدورِ برہنہ اور سرمایہ دار آقا اور بھوکا کاشت کار مظلوم وظالم مردہ خور باندی غلام اور تاج دار جتنا بھی ہوں شیر و شکر نہ ہوں گے بہن بھائی کبھی کہ گرگ و گوسفند کی یاری نہیں ہو سکتی گفت و شنید نہیں ہو سکتی ظالم اور ...

Read More »

عذابِ دید ۔۔۔ عاصمہ طاہر

میں کیسے بھولوں، وہ خوبصورت سی، چاکلیٹی سی شام کوئی بدن تمھارا کہ خوشبو ئیں لہلہا رہی تھیں تمہاری آنکھوں سے عکس کوئی جھلک رہا تھا وہ جس میں وادی کا سبز منظر چمک رہا تھا تمھارے ہونٹوں میں قہقہوں کے حسین موتی دمک رہے تھے وہ شام تو روشنی کے رازوں سے یوں بھری تھی کہ جیسے منظر مہک ...

Read More »