Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » 2015 » February

Monthly Archives: February 2015

میری ہم دم ۔۔۔ نیلم احمد بشیر

میں نے جب انہیں گھر سے نکالا تو وہ اداس دکھتی تھیں کھوئی کھوئی سی، گمشدہ بے گھری کے خوف سے سہمی ہوئی، مہر بہ لب میری رفیق، میری ہمدم، میری دوست ایک ایک کی رخصتی سمے ، میں نے انہیں دز دیدہ نگاہوں سے دیکھا کئی ایک کو تو میں نے ہاتھ تک نہیں لگایا تھا حالانکہ یہ بات ...

Read More »

کمر جھکا کر چلتا کل ۔۔۔ ثبینہ رفعت

پشاور تیرے پہاڑوں پر میرا غرور قتل ہوا جیون جنگ پر جاتے ہوئے وہ طلبائے علم و ہنر راہِ جستجو میں مار ے گئے انہیں بے خبر مت جانےے وہ سینہ تان کے چلتے تھے اور پشت سے اُ ن پر وار ہوا تیرے پربتوں پہ پشاور اُس دن سے ہمارا مستقبل اب کمر جھکا کر چلتا ہے پشاور تیرے ...

Read More »

غزل ۔۔۔ یوسف یاد

ارسی ترمپے دریائے گریوے مارا بُڈیّنے رپتے ہمایں توچہ ادا چیزے گارانت چمانی روپگ دمبرت پیر زالا موسم تا کاں ریچان انت مہتل تو پہ کئی اوستا؟ وہد کئیا پہ اوشتا تگ؟ دنیا دانکہ مارا زانت حاکے ھوربیت گوں حاکاں یادئے عکسے زاہیر بیت چارے دلئے توآدینکا

Read More »

راہشون ۔۔۔ ڈاکٹر علی دوست بلوچ

گوئزیت امروز ہمک پیما نہ مانیت وھد یک پیما بلے اِ ے دھر چے لوٹیت دُرھا جاور تئی دیما کسے بے مقصد ا زندگ کسے آ منزلئے شوہاز کسے بس لاپ والینیت کسے وَ رُپت و روپا اِنت کسے مرکا بہا زوریت کسے ئَ را کننت بیگواہ کسے ئِ ٹپ و ٹوریں جون کپیت ویرانگاں ڈیھئے مروچی من ہمے پیمیں ...

Read More »

غزل ۔۔۔ امیر خسرو

گفتم کہ روشن از امر، گفتا کہ رخسار منست گفتم کہ شیریں از شکر، گفتا کہ گفتار منست گفتم طریق عاشقان، گفتا وفاداری بود گفتم مکن جورو جفا، گفتا کہ ایں کار منست گفتم کہ مرگ عاشقان ، گفا کہ درد بجر من گفتم کہ علاج زندگی، گفتا کہ دیدار منست گفتم بہاری یا خزاں ، گفتا کہ رشک حسن ...

Read More »

گل زمین ۔۔۔ ڈاکٹر علی دوست بلوچسعدیہ حکیم

جب رات کے کسی پہر دنیا کے یہ سوغات رنج و الم کی صورت زندگی کو قبضے میں کرلیتی ہیں اس لمحے ہماری آنکھوں سے دو ر بھاگتی ہے نیند کی پری ہمیشہ اس لمحے بے نام سی یادیں بے نام سی لذتیں بے مثال مہ وشوں کی یادیں آتی ہے ہماری آنکھوں سے دور بھاگتی ہے نیند کی پری ...

Read More »

غزل ۔۔۔ ضامن مراد ۔ پیشکان

ترا جب سے دیوانہ گیا ہوں میں مشہورِ زمانہ ہوگیا ہوں تو آنے کا جو وعدہ کرگیا ہے میں جینے کا بہانہ ہوگیا ہوں مِرے مدِّ مقابل میں کھڑا تھا سو آپ اپنا نشانہ ہوگیا ہوں رہا نہ دیر تک ویراں تِرے بعد پرندوں کا ٹھکانا ہوگیا ہوں نشہ باہر کے موسم میں ہے ایسا کہ اندر سے سہانا ہوگیا ...

Read More »

نازش مِہراں ۔۔۔ تشنہ بریلوی

(سوبھوگیان چندانی کو خراج تحسین) خُسر چلا گیا ہے نہ سلطاں چلا گیا انسانیت اُداس ہے انساں چلا گیا ویران ہوئی ہے محفلِ یاراں بھی دوستو افسانہ ¿ حیات کا عنواں چلا گیا تھا خود ہی انجمن کہ نہیں تھا وہ ایک فرد اک پھول کیا گیا ہے گلستاں چلا گیا سوبھوگیانچندانی رخصت ہوا ہے آج و ہ فخرِ قوم ...

Read More »

موت کا انتظار ۔۔۔ عابد کاظمی

ہم میں سے کچھ ایسے تھے جو عبادت کدے میںمارے گئے چیخ و پکار کے بعد چرچ کی بینچیں اور گھڑیال خاموش ہیں ہم میں سے کچھ ایسے تھے جو جرم سنا ئے بغیر مارے گئے موت کے شب و خون کے بعد ہزارہ ٹاﺅن پھر جاگ رہا ہے ہم میں سے کچھ کراچی کی گلیوں میں گولی سے مارے ...

Read More »