Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » 2014 » June

Monthly Archives: June 2014

کِس کِس کو ۔۔۔۔ بلوچی تخلیق: گل خان نصیر ۔۔۔۔۔ اردو ترجمہ: گل خان نصیر

اے دل نادان! میں کِس کِس کو یاد کروں کِن کِن جوانمردوں کے نُوحے کہوں اور کِن کِن کے لےے آنسو بہاﺅں وادیوں میں جہاں بھی میں نظر ڈالتا ہوں تو مجھے کوّے ، گِدّھ اور لوٹ مار کرنے والے شکاری ہی نظر آتے ہیں جہاں جہاں بھی میں جاتا ہوں اور جس کِسی سے بھی بات چھیڑتا ہوں وہ ...

Read More »

شرپمندیں ڈاکٹر شاہ محمد مری صاحب

شالا سلامت ووش باتئے اے ہبر ا کسّے بہ منّی یا مہ منّیت بلیں منی دل و منی ضمیر لازم منّ انت کہ منی لبزانکی رھشوانی ئے تہا ” سنگت “ ئے یک بلاہیں کردے مان انت و امیت انت کہ انگتہ شما مارا یک کسترے لیکھ اِت و دست و گراِت و دیمی جنزگ و گام خبئگئے سکین و ...

Read More »

نہ پروشاں من اے دیوالا ۔۔۔۔۔۔۔ زاھدہ رئیس راجی

گمان ئِ ساھگ ئَ نشتگ ، پدا ستک ئَ شُھازیگاں ھما ستک ئَ کہ مہر ئِ سرزمین ئِ پھَر بندوک اَت امیتا نااُمیتی ئِ سپر وَ دیریں کُٹینتگ نزاناں چہ کجا باریں دری گواتا کلوھے پمنا گون ات کہ بیا مرچی، تئی بے آزمانیں سرزمین ئِ کینگ ئِ کوشا اجب یک جارے پرینتگ کہ تئی بُن پیروکی ھند ا مروچی ...

Read More »

دُعا۔۔۔۔ تخلیق: گل خان نصیر۔۔۔۔ منظوم ترجمہ: ڈاکٹر سلیم کرد

اے خدا وند کریم! کردے بلوچوں کو عطا ، جوہرِ کسب وفا! پرُدماغ و جانثار و زندہ دل روشن خیال فِکر جن کی ہو معطر ، مِثلِ صُبح کی ہَوا عقل جن کی نیل ساگر، پُر شکوہ ، جاہ وجلال ذہن جنکے ہوں مُبّرا ، عہدِ کہنہ کی ریت سے ”مسکراہٹ“، رنج میں بھی جنکے ہونٹوں پر بحال دل ہو ...

Read More »

غزل ۔۔۔۔۔۔۔ محمد افضل ہزاروی

پتھر سے ٹکرانا تھا زخم تو لازم آنا تھا کیا دھراتے پھرتے اب قصہ بہت پرانا تھا کیا پھر جچتا منظر کوئی آنکھ میں روپ سہانا تھا کیوں در کھول کے بیٹھے تم کون تھا جس کو آنا تھا افضل عشق نہ کرتے تم دار سے گھبرانا تھا

Read More »

لیلڑی ۔۔۔۔۔۔۔ محمد رفیق مغیری

بیا موسم بہاریں او لیلڑی آ لا منا تھئی انتطاریں او لیلڑی آ لا تھئی چے رضائیں او لیلڑی آ لا جدائی بد بلائیںاو لیلڑی آ لا تئی دگیں تہا نِغاہیں او لیلڑی آ لا مئیں چمیں تہا دریائیںاو لیلڑی آ لا خدازوراخیں بادشاہیں او لیلڑی آ لا ہمے کوڑی بے بقائیں او لیلڑی آ لا مئیں حالئے تھرا سمائیں ...

Read More »

چراغ جلانے کی رسم ۔۔۔۔۔۔۔ صنوبر سبا

تمہارے پاس اجلے صاف ستھرے بستر ہیں مگر تمہاری بھوک بہت میلی ہے تم دیکھ نہیں پاتے تمہاری آنکھوں کو صبح کی روشنی نے نہیں خواہشوں کے اندھے غار نے نابینا کر دیا ہے تمہاری آنکھ نے روشنی کی تلاش ہی چھوڑ دی ہے تو! اندھرا بہت جلد چھا جا ئے گا اور ! اندھیروں میں پھول نہیں کھلا کرتے ...

Read More »

برھنَگ ۔۔۔۔۔۔۔ اسحاق خاموش

من لوٹاں کہ وتی دوئیں چمّاں دستئے دلا ایر بکناں او ترا بِدیاں بلکیں تو چہ من گیش دیست بکن ئے اے چاگرد ا اے مردُماں اے مردُمانی چیریں کِرداں اوکردانی برھنگی آ مناپَہل کن ! من دمبُرتگ کہ وتی چمّاں پہریز اِت نہ کناں یا بگندئے ندارگاں سگّ اِت نہ کناں اوبند اِش اوں کُت نہ کناں کہ منی ...

Read More »