Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی (page 5)

شیرانی رلی

دوآرا دو کہ پِر کنئے ۔۔۔ شہاب اکرم

تَو بلکیں پہمیتگ دو آرا دو کہ پِر کنئے داں چَار بیت ۔۔۔۔۔ بلئے زر ئے شپ ئے دل ئے کتابادرجنئے داں چو نہ اِنت ،۔ اِے زندگی ، دو تامابہر کنت وتا منا ترا زمانگا ھزانگا داں ساہ بروت بئیت برے گْلاب بیت وگیمْریت برے شراب بیت ونْکّ آکْچلیں زہیر ایردنت اِے زندگی ھدا ئے دیدگاں نبشتگیں الہامی قصہ ...

Read More »

عالم برزخ ۔۔۔ ثروت زہرا

زمین اور آسمان کے درمیان ایک برزخ ہے جہاں جینے کا کھیل کھیل رہی ہوں مثبت اور نفی کے درمیاں ایک ونڈو پیرییڈ ہے جہاں میں زندگی سے ملاقات کرنے روز جارہی ہوں دن اور رات کے درمیاں پو پھٹے کی ایک ملگجی سی سڑک ہے جہاں سانسیں اپنی آکسیجن کا کاروبار کرنا چاہتی ہیں صحیح اور غلط کے درمیان ...

Read More »

غزل  ۔۔۔ فرزانہ رفیق

مُچا نن حِنا خدا نا ذکرٹی مس دے شروع خدانا ذکرٹی انت کیو بیان نا گِڑاتا اِی ہر گڑا ارے خدانا ذکرٹی داجہان ارے فانی فنا اے جہان ارے خدانا ذکرٹی کر مہر و محبت کُھل اتون میلو مہرنے خدانا ذکرٹی انت کروس محل وماڑی تے نی ہر خوشی ارے خدانا ذکرٹی کر تلاوت و نماز نی میلو اجرنے خدانا ...

Read More »

شیخ ایاز

جانتا ہوں کہ وہ وقت آئے گا جب مری شاعری کو اچانک کبھی چاند آکاش گنگا میں نہلائے گا جانتا ہوں کہ وہ وقت بھی آئے گا جب زباں کا تعصب نہ ہو گا کہیں میری خوشبو سے ہر اک مہک جائے گا جانتاہوں کہ وہ وقت بھی آ ئے گا جب نگر اور ڈگر ایک ہو جائیں گے میرا ...

Read More »

یہ تو پرانی ریت ہے ساتھی! ۔۔۔ گل خان نصیر

جتنے ہادی رہبر آئے انسانوں نے خوب ستائے کَس کے شکنجہ آرا کھینچا ہڈّی، پسلی، گودا بھینچا آگ میں ڈالا، دیس نکالا جس نے خدا کا نام اچھالا پتھر کھائے، سولی پائی جس نے سیدھی راہ بتائی شاعر و مجنوں ان کو بولے جن کی زباں نے موتی رولے روڑے مارے، خون بہایا ساحر کہہ کر ان کو ستایا ہم ...

Read More »

Lenin —  Gul Khan Nasir

Tr. Shah Koh Mengal Lenin, the brave tactician A portrait of love, valour and truth The eternal flame of knowledge and wisdom An epitome of toil and perseverance The leader of wretched masses The sword, striking at oppression’s roots A voice to the worker’s silent heart A shoulder to the peasant’s cause The smasher of the idols of gold A ...

Read More »

غزل  ۔۔۔ آسناتھ کنولؔ 

واقعہ تھا تو حادثہ بھی تھا دل کہیں پر کبھی جھکا بھی تھا مدتوں بعد یاد آیا ہے اُس سے نسبت تھی سلسلہ بھی تھا آس کی رہ گزار پر چُپ چاپ آرزو کا کوئی دیا بھی تھا ایک حسرت رہی فنا کے ساتھ ایک ماہوم سا گلہ بھی تھا تو نے گھبرا کے ساتھ چھوڑ دیا میں ترا درد ...

Read More »

غزل  ۔۔۔ عبداللہ شوہاز ؔ 

تئی واہشت ئے انگاراں درئیں پیلشتگاں مارشت دل ئے ہر دوئیں چمّ کوراں ، درامد بیتگاں مارشت گدارے ہم نہ جنت سنچے منا جنّتیں امبروز ئے وتا چہ سستگاں من وت منا چہ سستگاں مارشت اے ارواہ گوں تئی زلفاں ہمے امیت آ پیڑاتگ تو وہدے شنگ ئے ملگوراں دمانے پدّرہاں مارشت تئی شہر ئے ہمک وشبو منی وابانی مانا ...

Read More »

تھکن ۔۔۔ نیلم احمد بشیر

کتنی تھکن ہے ، کیسی تھکن ہے عجب تھکن ہے،غضب تھکن ہے کیا یہ میری روح کی تھکن ہے یا پھر میرے چُوربدن کی انتظار کی بھی ویسے ہوسکتی ہے اور امید بھی ہوسکتی ہے شاید ملن سمے کی تھکن ہے پروہ ملنا ملناکب تھا آخر ہم نے ملنا کب ہے جگراتوں کا رین بسیرا آنکھ میں کھبتی ٹوٹی کر ...

Read More »

مترجم منو بھائی

نزار قبانی کی نظم “ان کی کیا قدر جن کی زبانیں بند ہیں” کا آخری بند ۔ بحرِ اوقیانوس سے بحیرہ عرب اور خلیج تک پھیلے ہوئے بچو!۔ تم گندم کی بالیوں کی طرح ہماری امید ہو تم ہی وہ نسل ہو جو زنجیریں توڑے گی جو ہمارے سروں کی افیون تلف کرے گی جو ہماری خوش فہمیوں، اندیشوں اور ...

Read More »