Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی (page 4)

شیرانی رلی

دانا ھاں چے گشتہ ۔۔۔ گوہر ملک

۔1۔ نیکین جنین تئی آخرتا ہم شرکنت۔ ۔2۔ جنینا تکلیف مہ دئے بلکن آنہی تکلیفاں دور بکن۔ ۔3۔ آنہی کہ سئے جنک اَنت، آجنتا منی ہمسا یگ انت۔ ۔4۔ جنینے آ تعلیم کُرت بزاں کہ یک خاندانے آ تعلیم کُرت۔ ۔5۔ جنین پہ مُصیبت و غم ئے کم کنگاپیدا کنگ بوتہ۔ ۔6۔ جنین چہ آدما جوڑ انت و آدم چہ ...

Read More »

نوشین کمبرانڑیں

مَیں رہی جس مِیں بے پناہ، میری جاں تو ہے وہ دشت_بے خدا، میری جاں جیسے شِریانوں سے گزرتا رہا خواب کا ایک قافِلہ، میری جاں دْور تک ٹْوٹتی نہیں نظریں کوئی جادْو ہے جا بجا، میری جاں سبزہِ جان میں دھڑکنے لگا کوہساروں کا راستہ، میری جاں میری آنکھوں میں پھول تھے کل شام تیری آنکھوں میں کون تھا، ...

Read More »

یوسف عزیز مگسی

’’ ہم یا س و حرمان کی رٹ لگاتے رہنے کے لیے پیدا نہیں ہوئے‘‘۔ جس طرح کثیف ہوا آمد ورفتِ نفس کو مشکل بنا دیتی ہے بعینہ اسی طرح میرا معاملہ ہے ۔ مگر تم مجھے جانتے ہو، میں مایوس نہیں ہوا، مایوس ہونا ختم ہو جانا ہے ۔ آرزوئیں آباد رہیں، خواہ کبھی بھی زلفِ یار تک رسائی ...

Read More »

واقعہ سانحہ بن چکا ہے ۔۔۔ رضوان فاخر

وہ چھوٹا سا معصوم جانور سڑک کے کنارے کھڑا اور میں ابو کی انگلی کو تھامے ہوئے آرہا تھا اسے دیکھتا جارہا تھا اٹھا کر اسے اپنے گھر لانا چاہتا تھا پر مِرا فیل کارڈ میرے ابو کے ہاتھوں میں تھا اور چہرے پہ غصے سے ابھرے ہوئے سب نشاں تھے وہ چھوٹا سا معصوم جانور سڑک کے کنارے کھڑا ...

Read More »

بدن کا ہدیہ ۔۔۔ کشور ناہید

جب میری روح پرواز کر جائیگی کتنا شاداب ہوگا وہ بدن جسمیں میرا دماغ لگایا جائیگا اور وہ دل جب کسی جسم میں دھڑکے گا تو شہنائیاں گونجیں گی میں تو چاہونگی میری زبان سچ بولنے والے منہ میں لگادی جائے جس دن کسی چشم کو رکی مایوسیاں، میری آنکھوں سے یوں شعاع ریز ہوں کہ ہر ایک رنگ کی ...

Read More »

کشور ناہید

بھولے ہوئے زخموں کو آئینہ دکھاتا ہے اے کوچہ رسوائی کیوں مجھ کو بلاتا ہے جب آنکھ ذرا جھپکے ، باتوں میں لگا لینا یہ شوقِ تماشا بھی کیا حشر اٹھاتا ہے کیوں آنکھ پہنتی ہے ملبوسِ عزاداری کیوں خوابِ خزاں خورہ وحشت کو بڑھاتا ہے معلوم نہیں کچھ بھی ، معلوم سبھی کچھ ہے طاؤسِ بیابانی کیا مجھ سے ...

Read More »

غزل ۔۔۔ رضوان فاخر

اپنے کمرے میں کل ہم نے کچھ انجان جزیزے دیکھے اک خاموش سمندر دیکھا ، ٹوٹے پھوٹے تختے دیکھے آج پھر اک سرگوشی مجھ کو سانجھ سویر بلانے آئی پانی کے کچھ گیت سنے اور رقص کناں کچھ پتے دیکھے گھر پہنچے اور دروازے پر ٹانک بھی دِیں کشکول سی آنکھیں عمر گئے پھر بیٹھے بیٹھے ہم نے خواب سفر ...

Read More »

Whats app Message —- Usama Ameer

سات اپریل کی صبح زندگی کا بیسواں قدم اٹھانے سے پہلے ناشتہ کی ٹیبل پر گزری ہوئی رات کا دھواں اور میں بے ساختہ ہنسے جس کا اختتام ایک معنی خیز آنسو کے ساتھ ہوا ہی تھا کہ واٹس ایپ ٹون نے اپنی جانب متوجہ کرنے میں کامیابی حاصل کر لی اور کسی کا سوالیہ نشان مجھے کئی سال پیچھے ...

Read More »

غزل ۔۔۔ تمثیل حفصہ

وہ رات ہے , میں رات میں موئی ہوئی وہ نیند ہے , میں نیند میں سوئی ہوئی کیا نیند تھی جو خواب میں آئی نہیں وہ خواب ہے , میں خواب میں کھوئی ہوئی کچھ خواب تھے اس آنکھ میں رکھے ہوئے وہ آنکھ ہے، میں آنکھ میں روئی ہوئی اک آنکھ ہے جو خاک میں لپٹی رہی وہ ...

Read More »

یات ئے چراگ ۔۔۔ غفار عاجز

کجا شت انت ھما نوبت ھما باریگ کہ ارس مئے بچکندگانی مدام چمانی تہ استت ھما وھداں من چو بیاراں پدا سرجم کناں گوں تو ھما پاساں من سک ماراں بلے ارماں شت انت آ دؤر ھما باریگ پدا واتر کنگ مشکل ھما جاھاں ھما راہاں ھانل کہ روچ ئے سد برا من وْ تو دچاریگ بوتاں سد افسوز منا ...

Read More »