Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی (page 30)

شیرانی رلی

غزل  ۔۔۔ قاضی دانش صدّیقی

تو کوئی مہتابِ کوہ طور ہے یا کوئی جنت سے اتری حور ہے پھر بصارت کو بصیرت مل گئی پھر مری آنکھوں میں تیرا نور ہے میں نہیں واقف رموزِ عشق سے یعنی صحرا اب بھی کافی دور ہے سامنے آیا وہ شاید اس لئے اور بھی اک امتحاں منظور ہے آ پلٹ کر دیکھ رستے میں کوئی زخمی ہے ...

Read More »

سنہری کانٹا ۔۔۔ مصطفی شاہد

اْس نے کہا:۔ ”روشنی کے سمندر میں ہماری آنکھیں خوب صورت مچھلیاں ہیں کنارے پر تاک میں ایک ماہی گیر بیٹھا ہے اْس کے سنہری کانٹے میں دنیا کا ایک ٹکڑا پیوست ہے غور سے دیکھنا کہیں یہ ٹکڑا تمھاری آنکھیں اْچک نہ لے”

Read More »

خوان۔۔۔۔ثروت زہرا

کچھ لوگ زندگی کے خوان پر میٹھے کی طرح چن دےے گئے ہیں خوش ذائقہ،،۔۔۔۔۔۔ چاندی کے ورق میں لپٹے ہوئے مگر ان کی باری پیٹ بھرجانے کے بعد آتی ہے اور جن کے لیے ساری تیاری زبان کاذائقہ تبدیل کرنے کے لےے کی جاتی ہے

Read More »

آصف الفت

ترا کجا بہ پولاں ، شر ، زندگی شت ئے دور نیات ئے دوبر زندگی اَجب درد ئے کسہ اَنت منی سینگا گوں کیا بہ کناں اِشاں ہبر زندگی من چونیں دل سپائیں مردمے آں کنت گومّن وڑ وڑیں ہنر زندگی روچ زند ئے چوں پہ وشی گوزنت نہ بوت ساہتے شیرو شکر زندگی دائما نہ مانیت اے دنیا آصف ...

Read More »

اسلم سید  

کش ات شہ چاتا گلیں شالا منا ذند بکشاتا گلیں شالا مئے گنوکانی کجام بستار انچو مھر داتہ گلیں شالا ھما گوات کہ ھانل ئے بوھہ کنت اَلّ پما گواتا گلیں شالا کار دنت ادا بس سپاھیں دل نچارنت زریاتا گلیں شالا شال ئے منت سید سر وچمان ھانلے من کماتہ گلیں شالا

Read More »

احمد شہریار

آنکھوں میں ایک باغ تھا، جانے کہاں گیا دل میں کوئی چراغ تھا، جانے کہاں گیا! ہر ذرہ کہہ رہا ہے: ابھی میرے ہاتھ میں افلاک کا سراغ تھا، جانے کہاں گیا؟ میری طرح کا شخص تھا جس کے نصیب میں میری طرح کا داغ تھا، جانے کہاں گیا مصروفیت کے روز و شب و مہ و سال میں اک ...

Read More »

وحیدنور

آج کے حالات پر بھی بات ہونی چاہےے روشنی میں رات پر بھی بات ہونی چاہےے ہو چکے وہ سانحے جن کو کہ ہونا تھا کبھی اب نئے خدشات پر بھی بات ہونی چاہےے اہلِ دہشت نے پسِ دیوار رکھا ہے جسے بات کیا ہے؟ بات پر بھی بات ہونی چاہےے

Read More »

صبر۔۔۔۔ثبینہ رفعت

لہجہ بھیگا بھیگا ہوتو پھر بھی دل کو کوئی الزام نہ دینا درد کی شدت میں توجاناں آنکھیں بھیگ ہی جاتی ہیں لیکن اب کے باتیں بھیگ بھی جائیں تو آنکھوں کو چپ رہنا ہوگا

Read More »

وحید نور

یوں نہ تھا انسان پتھر ہو گیا دیکھ کر بھگوان پتھر ہو گیا ڈھوتے ڈھوتے تھک گئی ہے زندگی زیست کا سامان پتھر ہو گیا پہلے دھڑکا دل کی صورت یک بہ یک اور پھر زندان پتھر ہو گیا بہت کی صورت ہی تراشا تھا ا±سے پھر مرا ایمان پتھر ہو گیا بے حسوں پہ نظم کیا لکھی وحید خودبخود ...

Read More »

حبشی۔۔۔۔شاعر: مہدی اشرفی۔ترجمہ: احمد شہریار

ہمیشہ ایک ایسے آدمی کا قتل ضروری ہے جو ہمیں عزادار رکھے میں کالے کپڑے پہنوں اور تمہارے سائے جمع کروں یہاں تک کہ صبح کے آٹھ بجے رات ہوجائے رنگوں بھری بالٹی اٹھا کر خود پر انڈیل دوں میں ایک حبشی ہوں میری جلد سے پسینہ نہیں نکلتا بلکہ وہ روتی ہے فوجی کیمپ میں میری جبری مشقت پر ...

Read More »