Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی (page 2)

شیرانی رلی

تقریب برائے گفتگو  ۔۔۔ سمیرا کیانی

سوال و جواب تو بہت ہوئے ہم سوال کرتے رہے وہ جواب دیتے رہے سوالوں کا تسلسل ٹوٹا تو الجھن میں پڑے اب کیا پوچھیں؟ کیسے ٹوٹی زنجیر جوڑیں کیسے کڑی سے کڑی ملائیں؟ آخر الجھی ڈور یوں کو سلجھائیں اب کڑی سے کڑی وہ ملائیں اب سوال سارے اْدھر سے آئیں اور جواب سارے اِدھر سے جائیں یوں تقریب ...

Read More »

سعید مزاری

دانی یاداں مخف منی محرم تو نزانئے کہ یاد چے ئینت اژمں یادانی پولا کن تو تہ چْکے ئے لئیوئے سنیں تئی مارا سْدھیں ما زیند گوازینتہ مارا یادانی ولھرے گونیں ما ھمیشاں را چْپ چْی غا عمرئے گرانیں یہ بہرے بشکاثہ یاد زوراخین و وث سریں چی ئینت اے پہ آراما نِندغا نئیلنت شاد بئیغ و کندغا نئیلنت قولے ...

Read More »

نوشین قمبرانی

خوابوں کے ذَرّات کا نور بھی صْبحوں میں حل ہو مٹی پہ مرجانے والی راتوں کی کَل ہو سْرخی مائل رَوہی ہو یا پھر پِیلا تَھل ہو مجھ میں صحرا ہو صحرا میں ریت کا دلدَل ہو گیتوں کے ہونٹوں پہ خاموشی ہو چمکیلی راہوں کی آنکھوں میں سَنگریزوں کا کاجل ہو میں جمتی کائی ہوں دریاوں کے سنگم پر، ...

Read More »

غزل ۔۔۔ بلقیس خان

اب تو اکثر یہ سوچتی ہوں میں کیا ترے دل میں واقعی ہوں میں شہر۔ مفتوحہ ،، دیکھ حسرت سے تجھکو سرحد سے دیکھتی ہوں میں مفلسی دیکھتی ہے کیا ایسے تیری تصویر بھی رہی ہوں میں وقت۔ آخر میں ملنے والے شخص تجھ کو صدیوں سے جانتی ہوں میں میرے ماتھے کی شکنیں جانتی ہیں کس قدر تجھ کو ...

Read More »

غزل ۔۔۔ بلقیس خان

عشق دریا ہے گراں بار نہ جانے کوئی بہتے پانی کو گنہگار نہ جانے کوئی اس میں روحوں کی ملاقات ہوا کرتی ہے خواب کے پیار کو بیکار نہ جانے کوئی میں جو حالات کے دھا رے میں بہی جاتی ہوں مجھ کو لہروں کا طرفدار نہ جانے کوئی سر جھکایا ہے محبت میں محبت کے لئے اس محبت کو ...

Read More »

غزل ۔۔۔ سیماب ظفر

عزا میں ڈوبے ہوئے دن تمام کرتے ہیں بقایا عمر ہم اب اپنے نام کرتے ہیں یہ تیرے عشق زدہ, خامشی کے پالے ہوئے پس از وداع بھی تجھ سے کلام کرتے ہیں اب اپنے گھر کا دریچہ بھی وا نہیں ملتا سو تیرے شہر کی گلیوں میں شام کرتے ہیں خبر بھی ہے, کہ وہ اِس رِہ پہ اب ...

Read More »

سب تو ازُن میں ہے ۔۔ سلیم شہزاد 

اور بھی اَن گنت ہیں، مسائل یہاں بات سیدھی سی ہے باٹ مرضی مطابق ہوں تو سب توازن میں ہے (تم کبھی) سر کے بَل ، دیکھنا آسماں سچ میں بادل نکلتے ہیں پیروں تلے پاکہ اوندھا پڑا ہے جہاں ٹوٹتے ، جُڑتے ، بنتے ، بگڑتے ہوئے رنگ ، رشتے ، بدلتے ہوئے فرصتیں کب، میسّر مگر اک ستارے ...

Read More »

غزل ۔۔۔ فرزانہ رفیق

دون کہ کنا دنیا ویران مس زندکنا اوڑ کے پریشان مس اُست کنانے کہ بے قرار اس اینو ختم کنا انتظار مس زندنا دے کہ صنم چھار اریر برکہ داچمن زیبدار ارے دون خدا کنے آ مہربان مس اینو کنا پُھل کنا مہمان مس خن تے تینا خماری کجل کرے اُستے کنا اوتینا بندی کرے

Read More »

سلیم جان بزدار

دل بِل گنوخ بیغا ، نیستیں وفا جہا نا کھسا پھ تھو گرے نہ دروہائیں کْل زمانہ کْل روش سنگتی آں، دووزا کہ روش بیثہ بے باوراں اے کْلیں۔ کھلاں تہار نیاما ہر کس پھہ جوفوے آ کھے تئی غلام جکی جوفو کذی چو پھیلو نہ گندئے پھدا غلاما من سمجثا مسیحا ، دشمن د مئیں ھمانہا کھندانا کھشتغانی مئیں ...

Read More »

غزل ۔۔۔ محسن چنگیزی

موسم کو یاد حرفِ دعا رہ گیا میرا دستِ خزان پھول کِھلا رہ گیا میرا کیا بند کر کے آیا ہوں میں کچھ خبر نہیں دروازہ پھر سے گھر کا کْھلا رہ گیا میرا باہر میں آگیا ہوں خدوخال کے بغیر چہرا اک آئینے میں رکھا رہ گیا میرا دریا کی بوند بوند میں آنکھوں سے پی گیا وہ پیاس ...

Read More »