Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی (page 117)

شیرانی رلی

غزل ۔۔۔۔۔ مشتاق احمد

تاریکیوں کو روشنی سے آشنا کریں دیوارِ شب پہ پھر کوئی روشن دیا کریں تخلیق ہو نئی اک محبت کی داستاں زندہ جہاں میں اس طرح رسمِ وفا کریں پھر اک نیا نکھار دیں غنچہ و گل کو ہم پر کیف و عطر بیز چمن کی فضا کریں ابھرے دلوں میں جذبہ تعمیر عہد کو ذہنوں سے اپنے بغض و ...

Read More »

غزل ۔۔۔۔۔ صنوبر سبا

کبھی داغ دل جو دکھا سکے کبھی حال دل جو سنا سکے کوئی اور ہے ،کوئی اور ہے میری طرح کیا وہ منا سکے تیری آنکھ میں کوئی راز ہے تو چھپا اسے جو چھپا سکے تو نے کھیل سمجھا ہوا ہے کیا اسے بھول جا جو بھلا سکے کوئی شمع بن کے جلا ہے تو بجھااسے جو بجھا سکے ...

Read More »

مِزِل ۔۔۔۔۔ عزیز مینگل

گام کہ گام کہ گام نن و دے و شام مِزِل ارے مُر داسکا کسر ارے پُر داسکا چُر و چیل و ڈور آن غلیم آتا ذور آن سنگتاتا گور آن مرام ہفک شاہ دگ اَس داتو ہر ے رُنگ اَس ڈکوک ہرے داٹی خل خل اَڈُنگ اَس ہر فینو نا گندھے کیرغ شاغا نو ہند ئے دُز و ٹیک ...

Read More »

کہانی کا نقطہ ِ انجماد ۔۔۔۔۔ احمد شہر یار

ہوا منجمد ہو مکاں بند ہوجائیں سورج کی کرنیں اداسی بھری گنگ لہریں …….. یہ پایا ب لہریں …….. اگر خاک مردہ میں ڈوبیں …….. اگر ڈوب جائیں…….. تو شاخوں پہ پھولوں پھلوںکی جگہ کونپلوں کی جگہ پھپھوندی نکلتی ہے پھر آہستہ آہستہ خوابیدہ آنکھوں پہ دستک سے بچتے بچاتے خود اپنی ہواﺅں میں گم اور اپنی ہی کرنوں میں، ...

Read More »

دستونک ۔۔۔۔۔۔ حنیف حسرت

دلبئر چیا کِسّہ نہ جنت لوگ ئِ وتئی ڈسّ ئَ نہ دنت گوں سر گُوات ئِ پجی ئَ مسک ءُ ذناں آتار کنت آمیتگ ئِ کوّاس تِراِنت کسّ ئَ سر ءُ سوج ئِ نہ دنت در بُرت تئی مہر ئِ کتاب اشک ئِ منا کہ در پِر اَنت

Read More »

غزل ۔۔۔۔۔۔ اکرم خاور

روشنی گر نہ دی ستاروں نے تیری خاطر میں چھین لاﺅں گا یاد تیری کبھی جو آئی تو اپنی دنیا کو بھول جاﺅں گا بن تیرے پھول بھی نہیں کھلتے خوشبو ملتی نہیں ہے گلشن کو تیری جھولی میں خوشیاں بھرنے کو اپنی خوشیوں کو میں لٹاﺅں گا تجھ سے ملنا تھا اپنی قسمت میں ورنہ کتنی بڑی ہے یہ ...

Read More »

غزل ۔۔۔۔۔۔ ڈاکٹر منیر رئیسانی

شعلوں کو خواب سونپ کے پہچانتے ہیں لوگ امید گر کِسے یہاں گردانتے ہیں لوگ شہرِ سخن دریدہ، ذرا سا خیال کر لہجے کے زہر سے تجھے اب جانتے ہیں لوگ اپنی مثال دے کر وہ سمجھا گیا مجھے بستی کو دشت جان کے کیوں چھانتے ہیں لوگ بیٹھا ہے شاخِ جاں پہ سراپائے خوش کے ساتھ اک طائرِ خیال ...

Read More »

غزل۔۔۔۔۔ شفقت علی عاصمی

سچ کو جب برملا کہے کوئی کیوں مجھے پارسا کہے کوئی آپ سا کوئی بھی نہیں شاید اب کسے آپ سا کہے کوئی اپنی کشتی کو جو ڈبودے خود اُس کو کیا نا خُدا کہے کوئی تو وفاﺅں کا ایک سوداگر کیا تجھے بے وفا کہے کوئی ہر دُعا بے اثر ہوئی اپنی کیا کسی کو دُعا کہے کوئی درپہ ...

Read More »